یمن: تین ڈرون حملوں میں 12 مشتبہ شدت پسند ہلاک

گذشتہ دو ہفتوں کے دوران یمن میں ڈرون حملے تیز ہوئے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یمن میں تین ڈرون حملوں کے نتیجےمیں 12 مشتبہ شدت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔ یہ کارروائیاں ایسے وقت پر ہوئی ہیں جب امریکا نے دہشت گردی کے خطرے کے تناظر میں گوبل الرٹ جاری کر رکھا ہے۔

خبر رساں ادارے "اے پی" کے مطابق ان میں سے ایک حملہ دارالحکومت صنعاء سے تقریباﹰ 175 کلومیٹر شمال میں ضلع وادی عبیدہ میں ہوا۔ وہاں مشتبہ شدت پسندوں کی ایک کار کو نشانہ بنایا گیا۔ ایک سکیورٹی اہلکار کا کہنا ہے کہ جمعرات کو ہونے والے اس حملے کے نتیجے میں چھ افراد ہلاک ہوئے۔ اس اہلکار نے بتایا کہ ہلاک ہونے والوں میں پانچ یمنی تھے جبکہ ایک کے بارے میں خیال ہے کہ وہ کسی دوسرے عرب ملک کا شہری تھا۔

دوسرا حملہ صوبہ حضرموت کے جنوبی علاقے العیون میں ہوا۔ وہاں تین مشتبہ شدت پسند مارے گئے۔ تیسرا حملہ بھی اسی صوبے کے علاقے القطن میں ہوا، جس کے نتیجے میں تین مزید مشتبہ شدت پسند ہلاک ہو گئے۔

امریکا نے یمن میں شدت پسندوں کے خلاف ڈرون حملوں میں خاصا اضافہ کر دیا ہے۔ اے پی کے مطابق عسکری ذرائع کا کہنا ہے کہ دو ہفتوں سے بھی کم عرصے میں یمن میں ایسے حملوں کے نتیجے میں القاعدہ سے وابستہ 34 مشتبہ شدت پسند ہلاک ہو چکے ہیں۔ ان حملوں کا نشانہ یمن کے دُور دراز پہاڑی علاقے ہیں۔ خیال ہے کہ القاعدہ کے پانچ بڑے رہنما انہی علاقوں میں چھپے ہوئے ہیں۔

اس کے برعکس ڈرون طیارے دارالحکومت صنعاء پر بھی محو پرواز دیکھے گئے ہیں۔ واضح رہے کہ امریکا یمن میں اپنے ڈرون پروگرام کو تسلیم کرتا ہے تاہم واشنگٹن انتظامیہ حملوں کی تفصیلات جاری نہیں کرتی۔ امریکی خبر رساں ادارے 'اے پی' کے مطابق یہ پروگرام امریکی محکمہ دفاع کی جوائنٹ اسپیشل آپریشنز کمانڈ اور سی آئی اے کے تحت چلایا جا رہا ہے۔

خیال رہے کہ دہشت گرد گروہ القاعدہ کے حملوں کے خطرے کے پیشِ نظر امریکا نے گذشتہ اختتام ہفتہ مسلم دنیا میں یمن سمیت 21 سفارت خانے اور قونصل خانے بند رکھنے کا اعلان کیا تھا۔ بعد ازاں بتایا گیا کہ فیصلہ دہشت گرد گروہ القاعدہ کے سربراہ کا ایک خفیہ پیغام ہاتھ آنے کا بعد کیا گیا تھا۔

امریکی اخبار نیویارک ٹائمز نے پیر کو ایک رپورٹ میں بتایا تھا کہ القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری کا یمن میں اس دہشت گرد گروہ کے سربراہ ناصر الوحيشی کے نام ایک خفیہ پیغام سکیورٹی حکام کے ہاتھ لگ گیا تھا۔ اس میں الظواہری نے گزشتہ اتوارکو یمن میں حملے کرنے کا حکم دیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں