.

''اسرائیلی ڈرون نے سیناء میں جہادی گروپ پر حملہ کیا تھا''

القاعدہ سے وابستہ تنظیم کا میزائل حملے میں چار جنگجوؤں کی ہلاکت کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے اسرائیل اور غزہ کی پٹی کے ساتھ واقع علاقے جزیرہ نما سیناء میں فعال القاعدہ سے وابستہ ایک جہادی گروپ کا کہنا ہے کہ جمعہ کو امریکا کے بغیر پائیلٹ جاسوس طیارے نے مصری علاقے میں اس کے جنگجوؤں کو نشانہ بنایا تھا۔

القاعدہ سے وابستہ گروپ انصار بیت المقدس نے ہفتے کے روز جہادیوں کی ایک ویب سائٹ پر ایک بیان پوسٹ کیا ہے جس میں اسرائیلی حملے میں چار جنگجوؤں کی ہلاکت کی اطلاع دی ہے۔اس وقت وہ مبینہ طور پر سرحد پار اسرائیلی علاقے میں راکٹ فائر کرنے کی تیاری کررہے تھے۔

بیان کے مطابق مرنے والے تمام چاروں افراد سیناء سے تعلق تھے اور وہ قبائلی مصری تھے۔ تاہم ان کا لیڈر حملے میں محفوظ رہا ہے۔ مصر کے سکیورٹی ذرائع نے جمعہ کو اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا تھا کہ اسرائیل کی جانب سے آنے والے ایک ڈرون کے میزائل حملے میں پانچ مشتبہ جنگجو مارے گئے ہیں۔

اس کے بعد مصر کے عسکری ذرائع نے اس بیان کی تردید کی تھی کہ اسرائیلی فضائیہ نے مصر کی داخلی حدود میں کوئی حملہ کیا ہے۔ ایک فوجی عہدے دار نے کہا تھا کہ مصری سرحدیں سرخ لکیر ہیں۔

فلسطینی خبررساں ایجنسی معان نے مصری فوج کے ایک ذریعے کے حوالے سے اطلاع دی تھی کہ ''اسرائیلی جنگی طیارے نے رفح کے علاقے میں راکٹ چھوڑنے والے لانچرز کو حملے میں نشانہ بنایا تھا۔ انھیں جہادیوں نے مبینہ طور پر جمعرات کو نصب کیا تھا''۔ اسرائیل نے سرکاری طور پر اس حملے کے حوالے سے کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے۔