.

یمن القاعدہ حملے، گیس ٹرمینل کے ناکے پر پانچ فوجی ہلاک

حضر الموت میں آئل ٹرمینل کا عملہ اور غیر ملکی ماہرین یرغمال بنا لیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

القاعدہ نے گیس تنصیبات پر حملے کے دوران پانچ یمنی فوجیوں کو ہلاک کر دیا ہے۔ القاعدہ کے ہاتھوں فوجیوں کی ہلاکت کا یہ واقعہ ایسے وقت میں پیش آیا ہے جب امریکہ اور برطانیہ نے یمن میں اپنے سفارت خانے عارضی طور پر بند کررکھے ہیں۔


یمن کے فوجی ذرائع کے مطابق اتوار کے روز حملہ آور ایک موٹر کار میں بالحاف گیس تنصیبات کے قریب فوجی چیک پوسٹ پر پہنچے اور اچانک فائرنگ شروع کر دی ۔جس سے پانچ فوجی موقع پر ہلاک ہو گئے، جبکہ حملہ آور موقع سے فرار ہو گئے۔

فوجی ذرائع نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا '' پانچوں فوجیوں کا تعلق ایک ایسی یونٹ سے تھا جسے یمن کے صوبہ "شابوا" میں قائم بالحاف گیس ٹرمینل کی حفاظت پر مامور کیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ یہ گیس ٹرمینل فرانس کی ایک کمپنی'' ٹوٹل'' چلا رہی ہے۔ اس گیس ٹرمینل پر ہی یمن کی بیشتر گیس برآمد کا انحصار ہے۔ سکیورٹی ذرائع کے مطابق حالیہ دنوں میں اس گیس ٹرمینل کے لیے القاعدہ سے کسی قسم کے خطرے کی اطلاعات نہ تھیں۔ تاہم حکومتی ترجمان کے مطابق یہ تنصیبات القاعدہ کے اہداف میں شامل تھیں اور حکومت کو اس کا اندازہ تھا۔

دریں اثناء القاعدہ نے یمن کے صوبہ حضر الموت میں کینیڈین کمپنی کے ذریعے چلائی جانے والی '' منا الدھابا آئل ٹرمینل ''کو بھی نشانہ بناتے ہوئے وہاں موجود غیر ملکی ماہرین سمیت عملے کو یر غمال بنا لیا ہے۔

گزشتہ کچھ عرصے سے امریکی ڈرون حملوں کی یمن میں رفتار تیز ہو گئی ہے اور القاعدہ کی تازہ کارروائیاں انہی کا ردعمل بھی ہو سکتی ہیں۔