مصر کو دی گئی امداد اخوان المسلمون کے لیے نہیں تھی

فرانسیسی وزیر خارجہ اور قطری وزیر خارجہ خالد العطیہ کی مشترکہ پریس کانفرنس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

قطر کی طرف سے وضاحت کی گئی ہے کہ جب بھی مصر کو امداد دی گئی وہ کسی خاص پارٹی یا اخوان المسلمون کو نہیں دی گئی وہ مصری مملکت کی مجموعی ترقی کے لئے دی گئی ہے۔ اس امر کا اظہار قطر کے وزیر خارجہ خالد العطیہ نے فرانس کے دارالحکومت میں اپنے فرانسیسی ہم منصب ''لورینٹ فیبئیس '' کے ساتھ ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس میں کیا ہے۔

قطری وزیر خارجہ خالد العطیہ نے کہا "مصر میں اخوان المسلمون کے لئے قطر کی حمایت کے بارے میں غلط تاثر دیا جا رہا ہے۔ قطر نے کبھی کسی مصری گروہ یا مصری سیاسی جماعت کو امداد نہیں دی ہے، جب بھی امداد فراہم کی گئی ہے تو اس کا مقصد پورے مصر کی ترقی کی راہ ہموار کرنا رہا ہے۔"

ان کا مزید کہنا تھا کہ،"قطر کی جانب سے امداد کی فراہمی مصر میں 2011 کے انقلاب کے بعد شروع کی گئی تھی جو اب تک جاری ہے۔ ہم کسی سیاسی جماعت کو امداد نہیں دیتے ہیں۔"

یاد رہے کہ قطر نے بدھ کے روز مصر میں سیکیورٹی فورسز کی جانب سے معزول مصری صدر محمد مرسی کے حامیوں پر کریک ڈاون کی پرزور مذمت کی تھی۔ قطر نے صدر مرسی کی معزولی کے بعد متعدد بار مرسی کے حمایتیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی بھی کیا ہے۔

اس موقع پر فرانسیسی وزیر خارجہ لورینٹ فیبئیس نے کہا کہ،"مصر کی صورتحال پر نظر رکھنے والے تمام افراد سمجھتے ہیں کہ مصر میں قتل عام روکنے اور مصریوں کو آپس میں مذاکرات شروع کرنے کی فوری ضرورت ہے۔ یہ اتنا آسان نہیں ہے مگر تمام ممالک کو اس سمت میں کام کرنے کی ضرورت ہے۔"

ان کا مزید کہنا تھا کہ"قطر، فرانس یا کوئی بھی اور ملک مصر پر کوئی حل مسلط نہیں کر سکتا ہے۔ مصریوں کو اپنے فیصلے خود ہی کرنے ہوں گے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں