.

لبنان سے راکٹ باری کے جواب میں اسرائیل کا جوابی حملہ

اسرائیلی حملے سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا: فلسطینی تنظیم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں سرگرم ایک شام نواز فلسطینی تنظیم کا کہنا ہے کہ جمعہ کو علی الصباح جنوبی بیروت میں اس کے ایک ٹھکانے پر اسرائیلی راکٹ حملہ کیا گیا ہے، تاہم حزب اللہ کے المنار ٹی وی چینل کے حوالے سے خبر رساں ادارے 'رائیٹرز' نے بتایا کہ حملے میں کوئی بھی شخص زخمی نہیں ہوا، نہ ہی اس سے فلسطینی تنظیم کی بیس کو زیادہ نقصان پہنچا ہے۔

پاپولر فرنٹ فار لبریشن آف فلسطین جنرل کمانڈ کے ترجمان کے المنار ٹی وی چینل پر نشر بیان میں دعوی کیا گیا تھا کہ پی ایف ایل پی ۔ جی سی کے جنوبی بیروت میں الناعمہ کے علاقے میں بیس پر اسرائیلی حملہ کیا گیا۔ واضح رہے کہ فرنٹ کے سربراہ احمد جبریل شامی صدر بشار الاسد کے کٹر حامی ہیں۔

پاپولر فرنٹ فار لبریشن آف فلسطین جنرل کمانڈ کے ترجمان کے بہ قول انہیں اس حملے پر اس لئے حیرانی ہے کہ اسرائیل پر داغے جانے والے راکٹ کی ذمہ داری القاعدہ نواز عبداللہ عزام بریگیڈ نامی گروپ نے قبول کی تھی۔ اس بریگیڈ نے سنہ 2009 اور 2011میں اسرائیل پر راکٹ حملوں کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

جمعرات کے روز لبنان سے اسرائیل پر راکٹ باری کے بعد فورا ہی اسرائیلی فضائیہ نے عسکریت پسندوں پر حملہ کیا۔ فرانسیسی نیوز ایجنسی نے اسرائیلی فوج کا ایک بیان نقل کیا ہے جس میں دعوی کیا گیا ہے کہ اسرائیلی ائر فورس نے بیروت اور صیدون کے درمیان واقع 'دہشت گردوں کے ایک ٹھکانے' کو نشانہ بنایا۔ یہ کارروائی اس جگہ سے اسرائیل پر داغے جانے والے چار راکٹ کے جواب میں کی گئی تھی۔ حملہ آور جہازوں کے پائلٹس نے بتایا کہ انہوں نے براہ راست ہدف کو کامیابی کے ساتھ نشانہ بنایا۔

یاد رہے کہ جمعرات کے روز لبنان سے داغے جانے والے چار میں سے دو راکٹ اسرائیلی میں کثیف آبادی والے علاقے میں گرے، جس سے مادی نقصان ہوا، تاہم حملے میں کسی شخص کے زخمی ہونے کی اطلاع نہیں ملی۔

اسرائیلی فوج نے جمعہ کے روز اپنی وارننگ کا اعادہ کرتے ہوئے لبنانی حکومت کو اس حملے کا ذمہ دار قرار دیا۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ہمیں گزند پہنچانے والے کو بھرپور جواب دیا جائے گا۔ ہمیں نشانہ بنانے والوں کو جان لینا چاہئے کہ ہم بھی انہیں جوابا نشانہ بنائیں گے۔

ادھر لبنانی صدر میشل سلیمان نے بھی جمعرات کو اسرائیل پر کئے جانے والے راکٹ حملے کی مذمت کی ہے۔ انہوں نے اس حملے کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کی خلاف ورزی قرار دیا اور کہا کہ اس سے لبنان کی خودمختاری پر بھی حرف آیا ہے۔ انہوں نے سیکیورٹی فورسز کو ہدایت کی کہ وہ اس کارروائی کے مرتکب بندوق برداروں کو جلد سے جلد گرفتار کریں اور انہیں قانون کے مطابق قرار واقعی سزا دیں۔