کیمیائی ہتھیار: امریکی انتظامیہ کی شام کیخلاف سرگرمیاں تیز

صدر اوباما کو جنگی مشیروں کی بریفنگ، ڈیوڈ کیمرون سے مشورے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی صدر اوباما کے جنگی مشیروں نے انہیں ان ممکنہ آپشنز کی تفصیلات فراہم کر دی ہیں جو شام کے خلاف استعمال ہو سکتی ہیں۔ ذرائع کا دعوی ہے کہ شام میں'' نو فلائی زون ''قائم کیا جا سکتا ہے۔ ہفتے کے روز امریکی صدر نے برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون سمیت اپنے اتحادیوں سے بھی مشورے کر لیے ہیں۔

امریکی وزیر دفاع چک ہیگل کے اس انکشاف کے بعد کہ کیمیائی ہتھیاروں کے واقعے کے باعث شام میں امریکی کارروائی کی تیاریاں مکمل ہیں، امریکی انتظامیہ کی اس حوالے سے سر گرمیوں میں تیزی آ گئی ہے۔ ہفتے کے روز امریکی صدر نے اس سلسلے میں مصروف رہے اور انہوں نے اپنے اتحادیوں کے ساتھ صلاح مشورے کیے۔ صدر اوباما نے برطانوی وزیراعظم کے ساتھ اس امر پر اتفاق کیا کہ عالمی برادری کو امکانی اقدامات کے بارے میں اعتماد میں لیا جائے گا، تاہم وائٹ ہاوس کی جانب سے فوری طور پر اس بارے میں تفصیلات فراہم نہیں کی گئی ہیں۔

البتہ صدر اوباما کے فوجی مشیروں نے انہیں ایسے تمام ممکنہ اقدامات اور آپشنز سے آگاہ کر دیا ہے جو شام کے خلاف کیمیائی ہتھیاروں کی پاداش میں بروئے کار لائے جا سکتے ہیں۔ اس بارے میں وائٹ ہاوس فی الحال کچھ سامنے لانے سے گریزاں ہے کہ امریکہ کیمیائی ہتھیار استعمال کرنے پر شام کے خلاف کیا کارروائی کر سکتا ہے۔ اس دوران شام کے خلاف کارروائی کے امریکی حامیوں کا کہنا ہے کہ شام کے خلاف نو فلائی زون کا قیام اہم ترین آپشن ہو گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں