عراق کی سکیورٹی فورسز شام پر ممکنہ حملے کے پیش نظر ہائی الرٹ

امریکا اور اس کے مغربی اتحادیوں کی شام پر حملے کی تیاریاں زور شور سے جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراق کے وزیراعظم نوری المالکی نے کہا ہے کہ ان کی حکومت نے سکیورٹی فورسز کو پڑوسی ملک شام پر مغربی ممالک کے ممکنہ فوجی حملے کے پیش نظر ہائی الرٹ کردیا ہے۔

نوری المالکی نے بدھ کو اپنی ہفتہ وار نشری تقریر میں کہا کہ ''عراقی سکیورٹی فورسز اور دوسرے سرکاری ادارے کو شام میں مغربی ممالک کے ممکنہ حملے کے مضمرات سے نمٹنے کے لیے ہائی الرٹ کردیا گیا ہے''۔

اس دوران امریکا اور اس کے اتحادیوں نے شام کے خلاف حملے کے لیے تیاریاں زورشور سے جاری رکھی ہوئی ہیں اور وہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی منظوری کے بغیر بھی شام کے خلاف اہدافی حملوں کے لیے راہ ہموار کررہے ہیں۔

واضح رہے کہ عراقی حکومت نے شام میں جاری خانہ جنگی کے حوالے سے غیر جانبدارانہ موقف اختیار کر رکھا ہے اور اس کا کہنا ہے کہ شامی تنازعے کو مذاکرات کے ذریعے سیاسی طور پر طے کیا جائے۔ تاہم عراق کے اہل تشیع شامی اپنے ہم مسلک صدر بشار الاسد کی حمایت کر رہے ہیں جبکہ اہل سنت شامی باغیوں کے حامی ہیں اور عراقی القاعدہ سے وابستہ جنگجو شام میں سرکاری فوج کے خلاف برسر پیکار ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں