ایران میں پہلی مرتبہ خاتون ڈپلومیٹ وزارت خارجہ کی ترجمان مقرر

مذہبی حلقوں کی جانب سے تقرر پر تنقید، مرد کو ترجمان مقرر کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کی وزارت خارجہ نے کیرئیر ڈپلومیٹ مرضیہ افخام کو اپنا نیا ترجمان مقرر کیا ہے۔ وہ اس منصب پر فائز ہونے والی پہلی ایرانی خاتون ہیں۔

ایرانی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق مرضیہ افخام گذشتہ تین عشروں سے وزارت خارجہ میں خدمات انجام دے رہی ہیں اور وہ 2010ء سے وزارت کے میڈیا اور پبلک ڈپلومیسی ڈیپارٹمنٹ میں ڈائریکٹر کے عہدے پر فائَز ہیں۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان عباس عرقچی نے جمعرات کو ان کے تقرر کا اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ وہ میڈیا سفارت کاری کے شعبے میں بہت جہاندیدہ اور تجربے کار ہیں۔ انھوں نے پارلیمان کے قدامت پسند حلقوں کی جانب سے مرضیہ افخام کے تقرر پر تنقید کو یہ کہہ مسترد کردیا ہے کہ خاتون کو ان کی مہارت کی وجہ سے ہی وزارت کا ترجمان مقرر کیا گیا ہے۔

ایران کے ایک مذہبی دھڑے سے تعلق رکھنے والے عالم دین حجۃ الاسلام مرتضیٰ حسینی کا کہنا ہے کہ علماء اس طرح کی اسامیوں پر خواتین کے تقرر کی مخالفت کریں گے۔ انھوں نے کہا کہ ہم وزیرخارجہ محمد جواد ظریف کو انتباہ کرنے والے ہیں کہ وہ ایک مرد کو اپنا ترجمان مقرر کریں۔

مرضیہ افخام کو اعتدال پسند صدر حسن روحانی کے اس تجویزی حکم کے بعد وزارت خارجہ کا ترجمان مقرر کیا گیا ہے جس میں انھوں نے اعلیٰ عہدے داروں سے کہا تھا کہ وہ خواتین کو اعلیٰ عہدوں پر تعینات کریں۔

تاہم ان کی نئی کابینہ میں تمام مرد وزراء ہی شامل ہیں اور صرف ایک خاتون الہام امین زادے کو پارلیمانی امور کی نائب صدر مقرر کیا گیا ہے۔ واضح رہے کہ حسن روحانی نے انتخابی مہم کے دوران کہا تھا کہ ان کی انتظامیہ میں خواتین کے ساتھ امتیازی سلوک کو برداشت نہیں کیا جائےگا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں