بشار الاسد سے علاقے کو خطرہ ہے، اسے سبق سکھایا جائے: جربا

حقیقی دوستوں کی ضرورت ہے، لفظوں کی نہیں: شامی اپوزیشن رہنما

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شامی متحدہ اپوزیشن کے سربراہ احمد الجربا نے مغربی ملکوں سے مطالبہ کیا ہے کہ صدر بشارالاسد سے شام کو نجات دلائی جائے اور اس کے خلاف انٹر نیشنل کریمینل کورٹ میں جنگی جرائم کا مقدمہ چلایا جائے۔

واضح رہے اس سے پہلے اقوام متحدہ اور عرب لیگ کے شام کے لیے مشترکہ نمائندے الاخضر الابراہیمی صاف لفظوں میں کہہ چکے ہیں کہ دمشق کے قریب الغوطہ میں سینکڑوں افراد کی ہلاکت کے لیے کیمیائی مواد استعمال کیا گیا ہے۔

اس صورتحال میں احمد الجربا نے کہا کہ ''اس پر حملہ ہونا چاہیے اور اس کی رجیم کو غائب ہونا چاہیے۔'' انہوں نے بشار الاسد کے خطے عوام کے لیے خطرناک ہونے کی تشریح کرتے ہوئے کہا'' وہ چھوت کی بیماری کا وائرس ہے، جس سے پورے علاقے کو خطرہ ہے، اسے اور اس کے خاندان کو ضرور ہیگ میں قائم جنگی جرائم کی عدالت کے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے۔''

شام کی متحدہ اپوزیشن مغربی ملکوں سے توقع رکھتی ہے کہ بشار الاسد کی رجیم کے خلاف ''سبق سکھا دینے والی ایسی یلغار ہونی چاہیے جسے سیاسی حمایت کے علاوہ آزاد شامی فوج کی حمایت بھی حاصل ہو۔''

متحدہ اپوزیشن کے رہنما نے بشارالاسد کے لیے روس، ایران اور حزب اللہ کی کھلی مدد کا ذکر کرتے ہوئے کہا '' ہمیں ایسی کوئی مدد میسر نہیں ہے، ہم اپنے اتحادیوں جو کچھ مانگتے ہیں تو وہ نہیں دیا جاتا'' اس موقع پر الجربا نے القاعدہ کے اثرات سے بھی خبردار کیا اور کہا ''ہم بشار الاسد سے ایسی نجات نہیں چاہتے، جس کے نتیجے میں القاعدہ آگے آ جائے، ان کا کہنا تھا انتہا پسندی سے خوف زدہ ہوئے بغیر حوصلہ مندی کے ساتھ فیصلہ کرنا چاہیے ہمیں حقیقی معنوں میں دوستوں کی ضرورت ہے محض لفظوں کی نہیں۔''

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں