بغداد میں سلسلہ وار دھماکے، 51 ہلاک، ڈیڑھ سو زخمی

شدت پسندوں نے دارلحکومت کے 10 مقامات پر دھماکے کئے: پولیس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

عراقی دارالحکومت بغداد میں سلسلہ وار بم دھماکوں نے قتل و غارت گری کے شکار اس شہر کو ایک بار پھر خون میں نہلا دیا۔ بدھ کے روز ہونے والے دھماکوں میں حکام نے 51 افراد کی ہلاکت کی تصدیق کر دی ہے۔

طبی ذرائع کے حوالے سے 'اے ایف پی' نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ ان دھماکوں کے نتیجے میں 150 دیگر افراد زخمی بھی ہیں۔ عراق میں 2008ء کے بعد کے بد ترین تشدد اور دہشت گردی کے اس حالیہ سلسلے میں اپریل کے بعد سے اب ہزاروں افراد مارے جا چکے ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق شدت پسندوں نے دارالحکومت بغداد کے کم از کم 10 مختلف علاقوں میں بدھ کے روز بم دھماکے کیے۔ ان دھماکوں میں سے شدید ترین دھماکا شمال مشرقی علاقے جِسر دیالہ میں ہوا جہاں سات لوگ ہلاک جبکہ 23 دیگر زخمی ہوئے۔

بغداد کے ضلع صدر سٹی کے ایک ریستوران کے مالک نے ایک دھماکے کا آنکھوں دیکھا حال رائیٹرز کو بتاتے ہوئے کہا کہ ’’ایک شخص نے اپنی کار ہمارے ریستوران کے سامنے پارک کی۔ اس نے ناشتہ کیا اور چائے پی۔ اس کے کچھ دیر بعد میں نے زور دار دھماکے کی آواز سنی۔ میں کچن میں تھا، جب باہر جا کر دیکھا تو اس شخص کی گاڑی مکمل طور پر تباہ ہو چکی تھی جبکہ وہ خود غائب تھا۔ بہت سے لوگ اس دھماکے میں زخمی ہوئے۔‘‘

رواں برس جولائی کے دوران ہونے والے بم دھماکوں اور تشدد کے نتیجے میں 1000 سے زائد عراقی ہلاک ہوئے۔ اقوام متحدہ کے مطابق 2008ء کے بعد یہ کسی ایک ماہ کے دوران ہونے والی سب سے زیادہ ہلاکتیں تھیں۔

بغداد کے الکاظمیہ ڈسٹرکٹ میں ہونے والے تین دھماکوں کے نتیجے میں پانچ افراد ہلاک جبکہ 30 سے زائد زخمی ہوئے۔ اطلاعات کے مطابق ان میں دو دھماکے سڑک کنارے نصب بموں کے تھے جبکہ ایک کار بم دھماکا تھا۔

بغداد کے جنوب مشرقی علاقے مدائن میں سڑک کنارے نصب بم کے دھماکے کے نتیجے میں چار فوجی ہلاک جبکہ پانچ دیگر زخمی ہوئے۔ پولیس کے مطابق اس بم کا نشانہ فوجی گاڑی کو بنایا گیا۔

اس کے علاوہ الطیفیہ کے علاقے میں ایک مسلح شخص نے القاعدہ کے خلاف برسر پیکار ملیشیا الصحوہ کے چھ ارکان پر فائرنگ کرکے انہیں ہلاک کر دیا۔ یہ فائرنگ بغداد کے جنوب میں واقع ایک چیک پوائنٹ پر کی گئی۔ اسی علاقے میں مسلح افراد نے ایک گھر میں گھُس کر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں چھ افراد ہلاک ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں