.

اتحادی فوج شام میں اپنے اہداف سے جیش الحر کو آگاہ کرے گی: جنرل سلیم

حلب کے کویرس ائرپورٹ میں محصور شامی فوجیوں کو ہتھیار ڈالنے کا حکم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی اپوزیشن جنگجوٶں پر مشتمل فری سیرئین آرمی [جیش الحر] کے سربراہ بریگیڈئر جنرل سلیم ادریس نے کہا ہے کہ امریکا اور اتحادیوں کے فضائی حملے بحران کے حل کا فیصلہ نہیں کریں گے بلکہ فیصلہ کن کارروائی شامی ہی کر سکتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اتحادی فورسسز کی جانب سے بشار الاسد کے فوجی ٹھکانوں کو نشانہ بنانے کے بعد جیش الحر ان کا کنڑول سنبھالنے کو پوری طرح تیار ہے۔ جنرل سلیم نے اس امر کا پہلی مرتبہ اعتراف کیا کہ ان کی کمان میں لڑنے والے جنگجوٶں کو ان مقامات کی نشاندہی کی جائے گی جنہیں امریکی فضائی حملے اور میزائل حملوں کا نشانہ بنایا جائے گا۔

دمشق کے مضافاتی علاقے الغوطہ الشرقیہ پر شامی فوج کے کیمیائی حملے کا جواب دینے کی خاطر بین الاقوامی حملے کی کوششیں جاری ہیں جبکہ دوسری جانب شامی فوج نے ملک کے مختلف حصوں میں فوجی کارروائیاں جاری رکھیں، سرکاری میڈیا پر شام کی جنگی تیاریوں کے مناظر دکھائے جا رہے ہیں۔ اکثر ٹی وی چینلز پر جنگی ترانے بھی چلائے جا رہے ہیں۔ کبھی کبھار شامی حکومت کا جنگی جنون اپنے ہی عوام پر گولا باری کی صورت میں دیکھنے کو مل رہا ہے۔

دارلحکومت سے موصولہ اطلاعات کے مطابق سرکاری فوج اور فری سیرئین آرمی کے جنگجوٶں کے درمیان دمشق کی مختلف کالونیوں میں جھڑپوں کی اطلاعات ملی ہیں۔ حلب شہر کے نواح میں کویرس ائر پورٹ پر محاصرہ میں آنے والی شامی فوج کے دستوں کو جیش الحر نے ہتھیار ڈالنے کے لئے چوبیس گھنٹے کی ڈیڈ لائن دے رکھی ہے۔

شام نیوز نیٹ ورک کے مطابق دمشق کے مختلف علاقوں بالخصوص المعضمیہ، یرموک، التضامن اور جوبر کالونیوں میں شامی فوج اور جیش الحر کے درمیان شدید جھڑپیں ہو رہی ہیں جبکہ شامی فوج کے توپخانے کی جوبر اور زملکا کالونیوں پر گولا باری کا سلسلہ بھی جاری ہے۔

شامی شہر المیادین پر بشار الاسد کی حامی فضائیہ کی گولا باری کے نتیجے میں دسیوں افراد کے ہلاک و زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں جبکہ حمص اور تلبیسہ پر بھی شامی فوج کا توپخانہ شدید گولا باری کر رہا ہے۔

سرکاری فوج نے حمص کے علاقے الدار الکبیرہ میں ہاون راکٹ اور بھاری توپخانہ استعمال کیا ہے۔ دوسری جانب جیش الحر نے الغوطہ الشرقیہ کے علاقے البحاریہ میں ریلوے اسٹیشن کا کنڑول سرکاری فوجیوں سے حاصل کر لیا ہے۔ اس کارروائی میں متعدد سرکاری عمارتوں کو تباہ کیا گیا۔ جنوبی حلب کے علاقے السفیرہ میں شامی فوج کے آفیسر کیمپ پر جیش الحر کے ہاون راکٹ حملوں سے متعدد فوجیوں کے ہلاک ہونے کی اطلاعات ہیں۔