.

اخوانی دھرنے بزور ختم کرانے پر مصری پولیس پر مالی نوازشات

کریک ڈاؤن کرنے والے پولیس اہلکاروں کے لیے 3.5 کروڑ ڈالرز بونس کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری پولیس پر برطرف صدر محمد مرسی کے حامیوں اور اخوان السلمون کے پُرامن احتجاجی دھرنوں کو بزور طاقت ختم کرانے پر انعامات کی بارش شروع ہوگئی ہے۔

مصری وزارت داخلہ نے 14 اگست کو قاہرہ میں رابعہ العدویہ اسکوائر اور النہضہ اسکوائر میں احتجاجی دھرنوں کو ختم کرانے کے لیے ''گراں قدر'' خدمات انجام دینے والے پولیس افسروں اور اہلکاروں کے لیے مجموعی طور پر ساڑھے چوبیس کروڑ مصری پاؤنڈز (ساڑھے تین کروڑ امریکی ڈالرز) بونس کا اعلان کیا ہے۔

اخبار المصری الیوم کی رپورٹ کے مطابق اس میں سے تین کروڑ مصری پاؤنڈز کی رقم قاہرہ اور جیزہ کے سکیورٹی ڈائریکٹوریٹس، پبلک سکیورٹی سیکٹر،نیشنل سکیورٹی ایجنسی اور سنٹرل سکیورٹی فورسز میں تقسیم کی جائے گی۔

باقی رقم ملک بھر میں وزارت داخلہ کے تحت پولیس اہلکاروں میں تقسیم کی جائے گی۔ قاہرہ میں پولیس نے مذکورہ دو مقامات پر صدر مرسی کے حامیوں کے احتجاجی دھرنوں کو ختم کرانے کے لیے خونیں کریک ڈاؤن کیا تھا۔ اخوان کے کارکنان اور برطرف صدر کے حامی پُرامن مظاہرین کے خلاف طاقت کے وحشیانہ استعمال کے نتیجے میں ایک ہزار سے زیادہ افراد مارے گئے تھے۔

مصر کے وزیرداخلہ نے دعویٰ کیا تھا کہ ان دونوں دھرنوں سے ہزاروں ہتھیار ضبط کیے گئے تھے۔ انھوں نے دھمکی دی کہ اب احتجاجی کیمپ لگانے کی اجازت نہیں دی جائے گی اور''غیر ذمے دارانہ'' طرزعمل کا مظاہرہ کرنے والے مظاہرین سے سختی سے نمٹا جائے گا۔