شام کیخلاف عالمی حمایت میں اضافہ ہو رہا ہے: جان کیری

ترکی، فرانس اور بعض عرب ممالک امریکی حملے سے متفق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے شام کے خلاف ممکنہ امریکی کارروائی کے لیے سفارتی حمایت بڑھنے کا عند یہ دیتے ہوئے کہا کہ بین الاقوامی اتحاد میں اضافہ ہو رہا ہے۔ عرب ممالک سے بھی اس سلسلے میں حصہ بننے کے لیے کہا گیا ہے۔

جان کیری کا کہنا ہے کہ '' ہم دوسرے ملکوں کے ساتھ مل کر حمایت حاصل کر رہے ہیں، ان میں عرب ملک بھی شامل ہیں۔'' جس طرح کہ اوباما انتظامیہ اس کوشش میں ہے کہ شام پر حملے کے منصوبے کے لیے کانگریس کی حمایت حاصل کر لے۔ عالمی سطح پر بھی حمایت کا حصول ممکن بنانے کے لیے سرگرم ہے۔

وزیرخارجہ نے کہا '' جن ممالک نے کارروائی مشترکہ طور پر کرنے کی بات کی ہے ان میں ترکی اور فرانس قابل ذکر ہیں، جبکہ بعض عرب ریاستیں بھی شامل ہیں۔ '' انہوں نے مزید کہا '' امریکا عالمی اتحاد کی تشکیل کے لیے اب تک ایک سو سے زائد ملکوں سے رابطہ کر چکا ہے ''۔ اسی دوران امریکی سینیٹ کی خارجہ امور کمیٹی بھی محدود کارروائی کے حق میں ووٹ دے چکی ہے۔

اگرچہ کانگریس کے بہت سے ارکان ابھی تک شش و پنج میں ہیں کہ یہ فوجی کارروائی امریکا کو ایک اور طویل جنگ کی طرف نہ دھکیل دے۔

جان کیری کے مطابق ' 31 ممالک اور تنظیموں نے کھلے عام بشار الاسد رجیم کو کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی ذمہ دار قرار دیا ہے، جبکہ 34 ملکوں یا تنظیموں نے مشروط انداز میں کہا کہ اگر یہ ثابت ہو گیا کہ شام کی حکومت نے کیمیائی ِ ہتھیار استعمال کیے ہیں تو وہ کارروائی کی کسی حد تک حمایت کریں گی۔''

انہوں نے کہا'' سینیٹ کمیٹی سے منظوری کے بعد امریکا کو ایسی پیش کشیں بھِی ملی ہیں جن میں شام کے خلاف محدود میزائل حملوں کے لیے مدد دینے کا کہا گیا ہے۔ ان میں سے بعض سے شامی رجیم کے خلاف کارروائی کا حصہ بننے کے لیے کہا گیا ۔'' جیسا کہ فرانس نے ایک آپریش کے لیے خود رضا کارانہ طور پر پیش کیا ہے،''

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں