اوباما کا پینٹاگان کو شام میں جنگی اہداف بڑھانے کا حکم

حکم شامی فوجی پوزیشنیں تبدیل ہونے کے بعد دیا گیا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

امریکی صدر اوباما نے پینٹاگان کو حکم دیا ہے کہ شام میں امکانی اہداف میں اضافہ کیا جائے۔ یہ حکم ان انٹیلی جنس اطلاعات کے بعد دیا گیا ہے جن میں کہا گیا تھا شام کی سرکاری افواج نے اپنی پوزیشنیں تبدیل کر لی ہیں اور کیمیائی ہتھیاروں کو نئی جگہوں پر منتقل کرنا شروع کر دیا ہے۔

اب تک کی اطلاعات کے مطابق امریکی فورسز اپنے اتحادیوں کی مدد سے شام میں پچاس سے زائد اہم اہداف کو نشانہ بنانے کی تیاری کر چکی ہیں لیکن صدر اوباما کے اس حکم کے بعد ان اہداف میں تبدیلی آ سکتی ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق شامی اہداف کو تباہ کرنے کے لیے امریکا اور فرانس کے جنگی طیاروں اور بحری بیڑے سے کروز میزائل فائر کرنے کی سٹریٹیجی بنائی گئی ہے۔ شام کے فوجی یونٹوں کے ساتھ ساتھ شامی باغیوں کے خلاف استعمال کے لیے ذخیرہ شدہ کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی صلاحیت، شامی فوج کے ہیڈ کوارٹرز، شامی فوج کے راکٹس، توپ خانے اور شامی فوج کی ممکنہ نقل حرکت کو ہدف بنایا جائے گا۔

ذرائع کا کہنا کہ شام پر حملے کے دوران کیمیائی ہتھیاروں کے مراکز پر حملے سے گریز کیا جائے گا تاکہ کوئی بڑا'' ڈیزاسٹر'' نہ ہو جائے، تاہم کانگریس کی منظوری تک کسی کارروائی کا امکان نہیں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں