.

شامی صوبہ حماۃ کے گورنر کے قتل کی ذمہ داری قبول کر لی

النصرہ فرنٹ کے ذمہ داری قبول کرنے کا انکشاف انٹیلی جنس گروپ نے کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پچھلے ماہ شام کے صوبے حماۃ کے ہلاک کیے گئے گورنر کے قتل کی ذ مہ داری شام میں سرگرم ایک اسلام پسند جنگجو گروپ نے قبول کر لی ہے۔ امریکا میں قائم ایک انٹیلی جنس مانیٹرنگ گروپ کی رپورٹ کے مطابق القاعدہ سے تعلق رکھنے والے سنی گروپ النصرہ فرنٹ نے حاما کے گورنر ڈاکٹر انس عبدالرازق کو 25 اگست کو بم دھماکے کا نشانہ بنایا تھا۔

النصرہ فرنٹ کو امریکا ایک دہشت گرد گروپ قرار دیتا ہے۔ امریکی رپورٹ کے مطابق اس جنگجو گروپ نے سڑک کے کنارے بم نصب کر رکھا تھا۔ جب گورنر حماۃ کا قافلہ نصب شدہ بم کے پاس سے گذرا تو بم کو دھماکے سے اڑا دیا گیا۔ امریکا میں قائم انٹیلی جنس مانیٹرنگ گروپ نے النصرہ کی طرف سے جاری کردہ بیان کو اپنی رپورٹ کا حصہ بنایا ہے۔

النصرہ کے بیان میں کہا گیا ہے '' اللہ کی مدد سے جرائم پسندوں کی رجیم کا ایک سرغنہ گورنر انس اپنے کئی ساتھیوں کے ساتھ مارا گیا '' انس عبدالرازق کو شام میں بشارالاسد کے ساتھ سنی مسلمانوں کے قتل کا ذمہ دار سمجھا جاتا تھا۔

اس سے پہلے گورنر حاما کے قتل کی ذمہ داری شام کے سرکاری ٹی وی نے دہشت گردوں پر ڈالی تھی۔ واضح رہے النصرہ فرنٹ پر اسی سال اپریل میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرف سے القاعدہ کے ساتھ تعلقات کی وجہ سے النصرہ فرنٹ کو کالعدم تنظیموں کی فہرست میں شامل کیا تھا۔