توسیع حرم پراجیکٹ سنہ 2014ء تک پایہ تکمیل کو پہنچنے کا امکان

منصوے کا مکمل ہونے والا حصہ آٓئندہ حج پر کھول دیا جائے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مسجد حرام کے توسیعی پراجیکٹ کے ڈائریکٹر اور الحرمین الشریفین امور کے چیئرمین انجینیئر عبدالمحسن بن حمد نے کہا ہے کہ خادم الحرمین الشریفین شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز کی ہدایت پر شروع کیے گئے توسیعی منصوبے کی تمکیل کوئی حتمی تاریخ نہیں دی جا سکتی تاہم انہیں توقع ہے کہ آئندہ برس [ 2014ء] کے اختتام تک یہ منصوبہ پایہ تکمیل کو پہنچ جائے گا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کےمطابق اپنے ایک بیان میں انجینیئر ابن حمید نے بتایا کہ توسیع حرم منصوبے کا کچھ حصہ مکمل کیا جا چکا ہے۔ اب تک مکمل ہونے والے پراجیکٹ میں مسجد حرم کا گراؤنڈ فلور، فرسٹ فلور کا کچھ حصہ اور ان دونوں فلورز سے متصل بیت الخلاء اور گیلریز کو مکمل کرلیا گیا ہے۔ آئندہ حج سیزن میں اُنہیں حجاج کرام کے استفادے کے لیے کھول دیا جائے گا۔

توسیع حرم کے پراجیکٹ ڈائریکٹر کا کہنا تھا کہ معذور افراد کے لیے "معلق مطاف" بھی اسی منصوبے کا حصہ تھا، جس کی تکمیل کے بعد گذشتہ ماہ صیام میں معتمرین کے لیے کھول دیا گیا تھا۔ معلق مطاف کا اصل مقصد معزورافراد کو الگ سے طواف کی سہولت مہیا کرنا تھا تا کہ رش کےدنوں میں حجاج اور معمترین کو معذور افراد کی وجہ سے کسی قسم کی مشکل کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ انہوں نے کہا کہ معلق مطاف تک پہنچنے کے لیے مشرق، مغرب اور جنوبی سمتوں سے داخلی اور خارجی راستے فراہم کیے گئے ہیں تاہم شمال کی سمت سے داخلی راستہ تکمیل کے مراحل میں ہے۔

خیال رہے کہ حرم شریف کی توسیع کا منصوبہ خادم الحرمین الشریفین کی ہدایت پر دو سال قبل شروع کیا گیا تھا۔ بیت اللہ کی تاریخ کا یہ سب سے بڑا توسیعی منصوبہ ہے جس کی تکمیل کے بعد مسجد حرام میں کم سے کم بیس لاکھ فرزندان توحید ایک ہی جماعت میں نماز ادا کرسکیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں