.

مصر: پچپن ہزار علماء خطبہ جمعہ نہ دے سکیں گے

معزول صدر مرسی کے حامی علماء عبوری مصری حکومت کے نشانے پر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی عبوری حکومت نے معزول صدر ڈاکٹر محمد مرسی کے حامیوں کے خلاف ایک اور اقدام کے طور پر تقریبا 55000 علماء اور خطیب حضرات کے زبان بندی کرنے کا فیصلہ کرنے کا عندیہ دیا ہے۔ عبوری وزیر برائے مذہبی امور نے اس امر کی تائید کر دی ہے۔

عبوری حکومت نے اس مقصد کے لیے یہ جواز بنایا ہے کہ ان علماء کی رجسڑیشن نہیں ہوئی ہے اور ان علما کے پاس لائسنس نہیں ہے۔ اس لیے انہیں مساجد میں تبلیغ کرنے اور جمعہ کے خطبے دینے کا حق نہیں دیا جا سکتا ہے۔

مصر کے عبوری وزیر برائے مذہبی امور محمد مختار گوما کا کہنا ہے کہ '' ان علماء کے پاس ضروری لائسنس نہیں ہے، نیز ان کے بارے میں یہ سوچ پائی جاتی ہے کہ یہ بنیاد پرست ہیں۔ اس لیے ان کی وجہ سے مصری سلامتی کو خطرہ ہو سکتا ہے۔''

عبوری وزیر کا کہنا ہے کہ اس فیصلے کا مقصد جمعہ کے روز مساجد میں ہونے والے تبلیغی عمل اور خطبات جمعہ کو قانون کے دائرے میں لانا ہے۔ اس اقدام سے انتہا پسندی کو مساجد سے دور رکھا جا ئے گا۔