مصر نے پروازوں کی تعداد میں اضافے کی قطری درخواست مسترد کر دی

فیصلہ دوحہ کا دو ارب ڈالر قرض واپسی کے بعد کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر میں مسلح افواج کی نگرانی میں قائم عبوری حکومت نے قطر کی امدادی رقوم اور مرکزی بنک کو دیا گیا قرض واپس کرنے کے بعد دو طرفہ پروازوں میں اضافے کی دوحہ کی درخواست مسترد کردی۔ دونوں ملکوں کے درمیان ناراضی اس وقت پیدا ہوئی تھی جب تین جولائی کو مصر کی مسلح افواج نے منتخب صدر ڈاکٹر محمد مرسی کو برطرف کر کے ملک میں ایمرجنسی نافذ کی۔

مصر کی فوجی عبوری حکومت قطر کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کے بجائے اپنی ہٹ دھرمی پر قائم ہے اور اس نے دوحہ کی جانب سے مصرکے مرکزی بنک کے لیے لیا جانے والا دو ارب ڈالر قرضہ بھی واپس کر دیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق دوحہ نے قاہرہ سول ایوی ایشن حکام کو مسافروں کی تعداد میں اضافے کے پیش نظر پروازوں کی تعداد بڑھانے کی تجویز پیش کرتے ہوئے عندیہ دیا تھا کہ قطری حکومت مصر کے لئے اپنی فضائی کمپنی کی پروازوں میں اضافے کو تیار ہے، تاہم قاہرہ حکام نے اس تجویز کو ماننے کے بجائے ٹکا سا جواب دیتے ہوئے کہا ہے کہ قطر کے لیے اضافی پروازوں کا کوئی انتظام نہیں کیا جاسکتا ہے۔

ذرائع کے مطابق دوحہ، مصر کے لیے ہفتہ وار پروازیں 28 سے بڑھا کر 42 کرنے کا خواہش مند ہے۔ قطری حکام اس حوالے سے قاہرہ سے بات چیت بھی کرنا چاہتے تھے مگر مصری شہری دفاع اور قاہرہ حکومت نے دوحہ کی درخواست مسترد کردی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں