اسرائیل میں ملازمت کی خاطر فلسطینیوں کو اجازت ناموں کا اجرا

فلسطینی علاقوں میں اسرائیلی پابندیاں نرم کرنے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل نے محاصرہ زدہ غزہ پٹی اور مغربی کنارے میں عائد بعض پابندیاں نرم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس اعلان کے تحت فلسطینیوں کو اسرائیل میں ملازمتوں کے لیے نئے اجازت نامے بھی دیے جائیں گے۔

نیویارک میں مشرقِ وسطیٰ کی ایڈ ہاک لیئزن کمیٹی کے ایک اجلاس کے بعد صحافیوں سے گفتگو میں اسرائیل کے وزیر برائے بین الاقوامی تعلقات يوفال شتاينتز نے کہا ہے کہ فلسطینیوں کو اسرائیل میں کام کرنے کے لیے پانچ ہزار نئے اجازت نامے جاری کیے جائیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ پُل النبی کو عبور کرنے کا دورانیہ بڑھا دیا جاے گا اور غزہ پٹی میں تعمیرات میں استعمال ہونے والے مخصوص سامان کی نئی درآمدات کی اجازت دی جائے گی۔

یہ اجلاس ایسے وقت ہوا جب اسرائیلی اور فلسطینی رہنما اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے لیے نیویارک میں موجود ہیں۔ بدھ کو اجلاس کے بعد صحافیوں سے باتیں کرتے ہوئے شتاينتز نے کہا: ’’ہم مستحکم، سرگرم اور خوشحال فلسطینی معیشت میں دلچسپی رکھتے ہیں۔‘‘

انہوں نے مزید کہا کہ بہتر اقتصادی ماحول بہتر سیاسی ماحول کی راہ ہموار کر سکتا ہے۔ اسرائیلی وزیر نے کہا: ’’اور مضبوط فلسطینی معیشت اسرائیل کے لیے اچھی ہے۔ یہ ہماری معیشت کے لیے اچھی ہے، یہ عمومی حالات کے لیے اچھی ہے۔‘‘

بعد ازاں فلسطینی وزیر خزانہ شكری بشارہ کا کہنا تھا: ’’یہ تنازع 50 سال سےجاری ہے اور یہ ضروری ہے کہ ہم اس کا حل تلاش کریں۔ اسے اسی طرح جاری رکھنا ناممکن ہے۔‘‘

انہوں نے اس بات چیت کو انتہائی کامیاب قرار دیا۔ خبر رساں ادارے 'اے پی' کے مطابق اس موقع پر فریقین غیر معمولی طور پر پرجوش دکھائی دے رہے تھے۔ بشارہ نے صحافیوں سے بات چیت میں کہا: ’’ہمیں اس حقیقت کا بالخصوص احساس ہے کہ ہم ایک ایسی ریاست قائم نہیں کر سکتے ہیں جس کا پورا انحصار بیرونی امداد پر ہو۔‘‘ شتاينتز کا کہنا تھا کہ فریقین نے وزرائے خزانہ کے درمیان مذاکرات شروع کر دیے ہیں۔

اس بات چیت میں فریقین نے امن مذاکرات کے عمل کو تیز کرنے پر اتفاق کیا۔ خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق اس اجلاس سے قبل امریکی وزیر خارجہ جان کیری کا کہنا تھا کہ دونوں فریق محض عبوری معاہدہ نہیں چاہتے بلکہ حتمی حل تک پہنچنے کے خواہاں ہیں۔

امریکی صدر باراک اوباما نے منگل کو فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس سے ملاقات کی تھی۔ آئندہ ہفتے واشنگٹن میں اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو سے بھی ان کی ملاقات متوقع ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں