ایران عالمی بنک کے نادہندگان کی فہرست سے خارج

ایران کے ذمے ابھی 616 ملین ڈالر کی رقم واجب الادا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عالمی بنک نے ایران کا نام نادہندگان کی فہرست سے خارج کر دیا ہے۔ عالمی بنک نے جمعہ کے روز جاری کیے گئے اپنے اعلامیے میں کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے اپنے ذمہ وہ تمام واجب الادا قرضے ادا کر دیے ہیں جن کی تاخیر کی وجہ سے اسے نادہندگان کی فہرست میں شامل کیا گیا تھا۔

بنک کی طرف سے کہا گیا ہے کہ قرضے دینے والے اہم ترین یونٹ، بحالی و ترقیات کے بین الاقوامی بنک نے اس حوالے سے تمام قرضوں کو نان پر فارمنگ سے پرفارمنگ میں منتقل کر کے قرضوں کی ادائیگیاں کر دی ہیں۔

اس بنک نے ایران کو 16 جولائی کو نان پرفارمنگ مقروض کا درجہ دیا تھا۔ جب ایران کی طرف سے اناسی اعشاریہ ایک ملین ڈالر کی ادائگیاں چھ ماہ تک ادا نہ ہونے کی وجہ سے رہ گئی تھیں۔

جمعہ کے روز جاری کیے گئے بیان میں بنک نے یہ وضاحت نہیں کی ہے کہ ایران نے کتنی رقم ان قرضوں کی مد میں ادا کی ہے۔ البتہ یہ بتایا گیا ہے کہ ایران ابھی تقریبا 616 ملین ڈالر کا مقروض ہے۔ واضح رہے اس بنک نے 2005 سے اب تک ایران کو مزید کوئی قرضہ نہیں دیا ہے ۔

بنک کے مطابق قرضے نہ دینے کی وجہ ایران پر عائد کردہ پابندیاں ہیں۔ ایران پر یہ پابندیاں اس کے جوہری پروگرام کی وجہ سے لگائی گئی ہیں۔ دوسری جانب تہران کا موقف ہے کہ اس کا جوہری پروگرام پر امن مقاصد کے لیے ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں