.

اسرائیل میں جاسوسی کے الزام کے میں ایک ایرانی شہری گرفتار

ملزم کے قبضے سے امریکی سفارت خانے کے نقشے برآمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل میں داخلی سلامتی کے خفیہ ادارے "شن بیت" نے ملک کے خلاف جاسوسی کرنے والے ایک ایرانی شہری کو حراست میں لینے کا دعویٰ کیا ہے۔

اسرائیلی حکام کا کہنا ہے کہ ملزم کو تل ابیب میں بن گوریون بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب سے گیارہ ستمبر کو حراست میں لیا گیا. گرفتار شخص کے قبضے سے تل ابیب میں امریکی سفارت خانے کے نقشے اور دیگر اہم تنصیبات کی تصاویر بھی برآمد کی گئی ہیں۔

"شن بیت" کے حکام کا کہنا ہے کہ زیرحراست ایرانی جاسوس کے پاس بیلجیئم کا پاسپورٹ تھا۔ جاسوس کو مبینہ طور پر ایرانی پاسداران انقلاب کی جانب سے جاسوسی کے لیے بیلجیئم کے راستے اسرائیل پہنچایا گیا تھا۔

اسرائیلی حکام کا کہنا ہے کہ علی المنصوری نامی اس ایجنٹ کو پاسداران انقلاب کی اسپیشل یونٹ میں بھرتی کیا گیا تھا جو دنیا بھر میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں بھی ملوث رہی ہے۔ اسرائیلی حکام نے دعویٰ کیا ہے کہ تفتیش کے دوران اٹھاون سالہ علی المنصوری نے کئی اہم انکشافات کیے ہیں۔ ملزم کا ماننا ہے کہ اسے پاسداران انقلاب کی جانب سے اسرائیل میں جاسوسی کے لیے بھیجا گیا تھا۔

جاسوسی کی خاطر اس نے اپنی اصل شناخت خفیہ رکھی اور "الیکس منس" کے ایک جعلی نام سے پاسپورٹ بنایا اور اسرائیل میں ایک غیرملکی کمپنی سے وابستہ تاجر ظاہر کرنا تھا۔ مشتبہ ایرانی ایجنٹ کا کہنا ہے کہ ایرانی انٹیلی جنس اداروں نے اسے مشن مکمل کرنے پر ایک ملین ڈالر کی رقم دینے کا وعدہ کیا تھا۔