.

ایک ہزار ٹن کیمیائی ہتھیاروں کی تلفی، بیس ماہرین شام پہنچ گئے

تقریبا پچاس مراکز کا معائنہ کیا جائے گا، شامی حکومت تعاون کو تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں مبینہ طور پر موجود کیمیائی ہتھیاروں اور ایک ہزار ٹن سارین گیس کا پتہ چلانے اور انہیں تلف کرنے کے لیے اقوام متحدہ کے 20 ماہر کیمیائی معائنہ کار دمشق پہنچ گئے ہیں۔ یو این معائنہ کار شام میں موجود کیمیائی ہتھیاروں کے ذخیروں کا پتہ چلانے، تصدیق کرنے اور انہیں ختم کرنے کی اپنی سرگرمیاں فوری طور پر شروع کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

کیمیائی ہتھیاروں کے خلاف معاہدے کا ہیگ میں قائم مرکز اقوام متحدہ کی طرف سے کیمائی ہتھیاروں کے معائنے اور تلفی کے لیے شروع ہونے والے اس عمل کی نگرانی کرے گا۔

شام کی بشار رجیم 21 اگست کو الغوطہ میں کیمیائی ہتھیاروں سے 1400 ہلاکتوں کے واقعے کے باعث امریکا روس معاہدے اور اقوام متحدہ کی قرارداد پر عمل کرنے کو ابھی تک تیار ہے۔

کیمیائی معاہدے کے مرکز او پی سی ڈبلیو کو ہیگ میں شام کی طرف سے موصول ہونے والی دستاویزات کے مطابق ایک ہزار ٹن سے زائد کیمائی ہتھیاروں اور زہریلی گیسوں کوپورے شام میں پھیلے تقریبا پچاس مختلف مراکز سے تلف کیا جانا ہے۔

شام کی حکومت کے ذرائع کے مطابق ان مراکز میں سے بعض باغیوں کے زیر قبضہ علاقوں میں واقع ہیں۔ واضح رہے گزشتہ اڑھائی برسوں سے شام کو خونریزی کا سامنا ہے۔