.

بغداد کار بم دھماکہ، ذمہ داری القاعدہ نے قبول کر لی

فرقہ وارانہ دہشت گردی میں ایک مرتبہ پھر تیزی آ گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں سرگرم القاعدہ سے منسلک گروپ نے دارالحکومت بغداد میں حالیہ کار بم دھماکے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ اس کار بم دھماکے میں 55 افراد لقمہ اجل بن گئے تھے۔

القاعدہ کی طرف سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ اس دھماکے کی وجہ سنی مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی گرفتاریوں اور اور ان کے خلاف تشدد کے واقعات پر ردعمل ظاہر کرنا تھا۔ واضح رہے اس کار بم دھماکے میں شیعہ آبادی کے متعلقین کو نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی تھی۔

گزشتہ ماہ سے جاری دہشت گردی کی حالیہ لہر میں دہشت گردی کا ایک بڑا واقعہ تھی۔ اس سے پہلے بغداد میں 2006 اور 2007 کے دوران بھی فرقہ وارانہ دہشت گردی میں غیر معمولی جانی نقصان ہو چکا ہے۔

عراقی ذرائع کے مطابق رواں سال کے دوران ماہ اپریل سے اب تک کم از کم 4500 افراد مارے جا چکے ہیں۔ گزشتہ مہینے ایک مرتبہ پھر دہشت گردی میں شدت آ گئی ہے۔