صدر رہوں یا نہ رہوں، ابھی کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہے: بشارالاسد

ابھی بھی عوام میں مقبول ہوں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

شام کے صدر بشار الاسد نے کہا کہ ابھی یہ کہنا قبل از وقت ہو گا کہ آئندہ صدارتی انتخابات کے بعد وہ کرسی صدارت پر براجمان رہیں گے یا نہیں۔ اس امر کا انکشاف انہوں نے ترکی میڈیا سے انٹرویو کے دوران کیا۔

بشار الاسد نے مزید کہا کہ ان کے مستقبل کے حوالے سے آئندہ چار سے پانچ ماہ کافی اہمیت کے حامل ہیں کیونکہ شام کو جس طرح کے حالات کا سامنا ہے اور زمینی حقائق کیا کہتے ہیں۔ شام اب پہلے جیسا نہیں رہا۔

ھالک ٹی وی سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اگر انہیں محسوس ہوا کہ اگر شام کو ان کی ضرورت نہیں ہے تو وہ خود ہی پیچھے ہٹ جائیں گے اور اقتدار کو عبوری حکومت کے حوالے کر دیں گے جب تک انتخابات نہیں کرائے جاتے۔

ملک میں خانہ جنگی کی صورتحال کے پیش نظر ابھی بھی ان کی مقبولیت میں کمی نہیں آئی ہے اور اقلیتں جن میں عیسائی اورعلوی شیعہ مکمل طور پر ان کے ساتھ ہیں۔

واضح رہے کہ بشار الاسد 2000ء سے کرسی صدارت پر براجمان ہیں اور ان کی دوسری صدارت کی سات سالہ مدت 2014ء کے وسط میں ختم ہونے والی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں