اردن نے وادی عقبہ کے بالمقابل اسرائیلی ایئر پورٹ کا منصوبہ مسترد کر دیا

ہوائی اڈے کا منصوبہ بیس سال سے تل ابیب کے ہاں زیرغور ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن نے وادی عقبہ کے بالمقابل مقبوضہ فلسطینی علاقے میں اسرائیل کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے منصوبے کی مخالفت کرتے ہوئے اسے مسترد کر دیا ہے۔ عمان نے باضابطہ طور پر اسرائیلی حکام کو بتا دیا ہے کہ ملک کے جنوب میں وادی عقبہ کے قریب ہوائی اڈے کے قیام سے شاہ حسین بن طلال ایئرپورٹ کی فضائی سلامتی و خود مختاری متاثر ہو گی لہٰذا اسرائیل ایسے کسی بھی منصوبے پرعمل درآمد سے باز رہے۔

اردن کی سرکاری خبر رساں ایجنسی"پٹرا" کے مطابق عمان سول ایوی ایشن اتھارٹی کے چیئرمین کیپٹن محمد القرعان نے اسرائیلی شہری دفاع کے حکام کے ساتھ ہونے والے اجلاسوں میں انہیں بتا دیا ہے کہ عمان اپنی سرحد کے قریب "ایلات" ایئر پورٹ کے متبادل ہوائی اڈے کا فیصلہ کسی صورت میں قبول نہیں کرے گا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اسرائیل گذشتہ بیس سال سے ایلات ہوائی اڈے کی جگہ اردن کی وادی عقبہ سے متصل علاقے میں ایئرپورٹ کے منصوبے پرغور کررہا ہے۔ عمان اور تل ابیب حکام کے مابین ہونے والی بات چیت میں اسرائیل پر واضح کر دیا گیا ہے کہ دوا لگ الگ ملکوں کے ہوائی اڈے کے منصوبوں سے ایک دوسرے کی فضائی خود مختاری متاثر ہو گی۔ نیز یہ منصوبہ دوملکوں کے ہوائی اڈوں کے حوالے سے بین الاقوامی شہری دفاع کے قواعد وضوابط کے بھی خلاف ہے۔ عالمی قانون سرحد سے متصل علاقوں میں دو ملکوں کو فضائی اڈوں کے قیام کے اجازت نہیں دیتا۔

اردن میں حزب اختلاف کی سب سے بڑی مذہبی سیاسی جماعت "اسلامک ایکشن فرنٹ" کی جانب سے جاری ایک حالیہ بیان میں بتایا گیا ہے کہ اسرائیل سرحد سے متصل جس ایئرپورٹ کے منصوبے پرغور کر رہا ہے وہ شاہ حسین ائیر پورٹ سے دو سو میٹر سے سے بھی کم مسافت پر ہے۔ جماعت نے خبردار کیا ہے کہ اگرتل ابیب نے اس منصوبے پرعمل درآمد شروع کیا تو اس کے نتیجے میں اردن کی فضائی سروس بری طرح متاثر ہوسکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں