مرسی کو برطرف خانہ جنگی سے بچنے کیلیے کیا: جنرل سیسی

کئی بار صدر مرسی سے کہا سیاسی اتفاق رائے بغاوت سے بہتر حل ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصری فوج کے سربراہ جنرل عبدالفتاح السیسی نے کہا ہے کہ مصری فوج نے منتخب صدر کو برطرف کر کے ملک کو خانہ جنگی سے بچا لیا ہے۔ فوجی سربراہ نے ان خیالات کا اظہار ایک اخباری انٹرویو کے دوران کیا ہے۔

جنرل سیسی نے کہا'' فوج کی طرف سے تین جولائی کو کیا گیا اقدام ملک کے وسیع تر مفاد اور ملکی سلامتی کے لیے تھا، اگر ایسا نہ کیا جاتا تو ملک میں خانہ جنگی چھڑ جاتی۔''

انہوں نے کہا '' تین جولائی سے پہلے سے جاری عوامی ریلیوں کے حوالے سے میں نے صدر مرسی سے بات کی تھی کہ افہام و تفہیم سے مسئلے کا حل نکالنے کے لیے آغاز کرنے کیلیے کہا تھا، تاکہ قومی اتفاق رائے سے سیاسی بحران کا خاتمہ ممکن ہو جائے۔''

جنرل سیسی نے مزید کہا '' سچ یہ ہے کہ میں معزول صدر کو ایک موقع دینا چاہتا تھا کہ وہ اپنے موقف میں تبدیلی لائیں اور اپنے تشخص کا خیال کریں، کیونکہ میں کسی فوجی اقدام کے مقابلے میں سیاسی حل کے حق میں تھا۔''

مصر کے فوجی سربراہ کے بقول '' میں نے معزول صدر سے کہا تھا کہ فوجی بغاوت سے سنگین خطرات ہوں گے،اس لیے بہتری کا راستہ یہ ہے کہ ووٹ کے ذریعے تبدیلی لائی جائے۔'' ان کے مطابق اصلاح کے لیے ایسی کئی کوششوں کے بعد 48 گھنٹے کے الٹی میٹم اور برطرفی کی نوبت آئی۔''

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں