جنوبی بغداد میں سڑک کنارے بم دھماکہ

عراق میں فرقہ وارانہ تصادم شدت اختیار کر گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراقی دارالحکومت بغداد کے جنوبی حصے میں سڑک کنارے نصب بم دھماکے سے مزدوروں کو لیجانے والا ٹرک تباہ ہو گیا۔ اس بم دھماکے کے نتیجے میں آٹھ افراد ہلاک اور سات زخمی ہو گئے۔

عراق میں تشدد کی حالیہ لہر اس سے پہلے سال 2008ء سے دیکھی گئی تھی جب ملک دو سال طویل فرقہ وارانہ جنگ سے باہر نکلنے کی کوشش کر رہا تھا۔ سال 2006-7 میں عراق میں بدترین فرقہ وارانہ لڑائی دیکھی گئی تھی اور اس کے نتیجے میں کئی ہزار افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

مبصرین اور سفارتکاروں کا کہنا ہے کہ عراق میں جاری صورتحال کی بڑی وجہ شیعہ حکومت کی جانب سے سنی اقلیت کے مسائل کو توجہ نہ دینے کی وجہ سے پیش آرہی ہے۔ سنی اقلیت کا دعویٰ ہے کہ عراقی حکومت ان کو سیاست کے میدان سے باہر رکھ رہی ہے اور انہیں سیکیورٹی حکام کی جانب سے برے سلوک کا بھی سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

سیکیورٹی اور میڈیکل ذرائع کے مطابق اس مہینے کے شروع سے اب تک 200 افراد تشدد کی اس آگ کی لپیٹ میں آ چکے ہیں اور سال 2013ء میں اب تک 4900 عراقی موت کی گھاٹ اتر چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں