سینا میں جعلی پولیس یونیفارم فروخت کرنے پر برطانوی گرفتار

کمپیوٹر اور موبائل فون سے مشکوک افراد کی تصاویر برآمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کی پولیس نے شورش زدہ علاقے جزیرہ نما سینا سے ایک برطانوی شہری کو حراست میں لینے کا دعویٰ کیا ہے جس کے قبضے سے پولیس یونیفارم اور سینٹرل سیکیورٹی فورسز کے زیراستعمال وردیوں کے مشابہ ملبوسات کی بڑی مقدار بھی ضبط کی گئی ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کے مطابق حراست میں لیے گئے 44 سالہ برطانوی شہری کے بارے میں مزید تفصیلات نہیں بتائی گئیں تاہم جزیرہ نما سینا میں اس کی دکان سے سیکیورٹی فورسز کے یونیفارم سے مشابہ وردیوں اور جوتوں سمیت کئی دیگر مشکوک چیزیں بھی برآمد ہوئی ہیں۔ ان میں ایک کمپیوٹر اور دوعدد موبائل فون بھی ملے ہیں جن میں محفوظ تصاویر اور لباس سے شبہ ہو رہا ہے کہ ان کا تعلق فلسطینی تنظیم اسلامی تحریک مزاحمت [حماس] سے ہو سکتا ہے۔

شمالی سیناء کے سیکیورٹی چیف کی جانب سے جاری ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ انہیں اطلاع ملی تھی کہ ایک برطانوی شہری مشکوک نوعیت کے ملبوسات فروخت کر رہا ہے۔ برطانوی ہونے کے باوجود وہ خود بھی مقامی قبائلی بدؤں میں گھل مل جاتا ہے۔

خیال رہے کہ مصری پولیس نے سیکیورٹی فورسز کے یونیفارم نما کپڑے فروخت کرنے والےغیرملکی کوایک ایسے وقت میں حراست میں لیا ہے جب حال ہی میں پولیس نے آپریشن کے دوران کئی مشکوک افراد کو پکڑ کران کے قبضے سے پولیس وردیاں، جوتے اور بڑی مقدار میں اسلحہ برآمد کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں