.

قطری ٹی وی پراسرائیلی پیراک کی شناخت مخفی رکھنے کا بھانڈا پھوٹ گیا

فہرست میں فارمیٹ کے خلاف اسرائیلی پرچم کے بجائے کھلاڑی کا نام تحریر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

خلیجی ریاست قطرمیں حال ہی میں ہونے والے پیراکی کے عالمی مقابلے میں کامیاب اسرائیلی کھلاڑی کی شناخت خفیہ رکھنے کے الزام نے اسرائیلی اور قطری میڈیا کو مد مقابل لاکھڑا کیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق دوحہ میں منعقدہ پیراکی کے 100 میٹر کے مقابلے میں اسرائیل سے عمیٹ عبری نے نمائندگی کی تھی جس نے مقابلے میں دوسری پوزیشن حاصل کی۔ مگر قطری ٹیلی ویژن چینل نے مقابلے کی خبر کے دوران اسرائیل کی مقابلے میں شناخت دانستہ طور پر خفیہ رکھنے کی کوشش کی مگر اس کا بھانڈا پھوٹ گیا۔ مقابلے میں اسرائیلی پیراک نے دوسری پوزیشن حاصل کرکے کانسی کا تمغہ جیتا تھا، قطری میڈیا نے اس کا تذکرہ بھی گول کردیا۔

اسرائیل کے عبرانی اخبار"معاریف" کی رپورٹ کے مطابق "دوحہ میں پیراکی مقابلے میں مقامی تماشائیوں کا رویہ مثبت رہا لیکن ذرائع ابلاغ نے منفی کردار ادا کیا۔ کئی بڑے اخبارات اور ٹیلی ویژن چینلوں نے اس خبر کو کوئی خاص اہمیت نہیں دی لیکن سرکاری ٹی وی پر نشر کی گئی خبرمیں مقابلے میں دوسری پوزیشن حاصل کرنے والی اسرائیلی ماڈل کی شناخت دانستہ طور پر چھپائی گئی۔

ٹی وی کی اسکرین پرمقابلے میں کامیاب امیدواروں کوان کے ملک کے پرچم کے ساتھ دکھایا گیا لیکن جب عیٹ عبری کا نام آیا تو اسرائیلی پرچم کی جگہ صرف سفید خانہ خالی چھوڑا گیا۔ ایسا اس لیے کیا گیا تاکہ یہ ظاہر نہ ہوکہ مقابلے میں کسی اسرائیلی ماڈل نے بھی حصہ لیا اور وہ کامیاب بھی ہوئی ہے۔ تاہم اسرائیلی عوام نے قطری ٹی وی کے اس "دوغلے پن" کا بھانڈہ پھوڑ کر عمیٹ کی شناخت پوشیدہ رکھنے کی کوشش بے نقاب کر دی ہے۔

مقابلے میں پہلی پوزیشن ہنگری جبکہ تیسری جرمنی کی ایک پیراک نے حاصل کی۔ جب انعامات کی تقسیم کے لیے تقریب منعقد کی گئی تواس وقت بھی قطری ٹی وی نے عمیٹ عبری کو کوئی اہمیت نہیں دی اوراس کے تعارف کے دوران یہ ظاہر نہیں ہونے دیا گیا کہ اس کاتعلق اسرائیل سے ہے۔