آئی ایم ایف کا رویہ غیر مناسب ہے: سربراہ مصری سنٹرل بنک

عبوری کابینہ آئی ایم ایف سے معاملات کرنے کیلیے جلدی میں ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کے مرکزی بنک کے سربراہ ہشام رمیز نے مصر کے ساتھ انٹر نیشنل مانیٹرنگ فنڈ کے روِیے کو غیر مناسب قرار دیتے ہوئے آئی ایم ایف پر تنقید کی ہے۔ مصری بنک کے سر براہ نے اس امر کا اظہار آئی ایم ایف کے حالیہ سالانہ اجلاس کے حوالے سے کیا ہے.

واضح رہے آئی ایم ایف کا سالانہ اجلاس رواں ماہ کے شروع میں ہوا تھا۔ جس کے لیے مصر کو دعوت دینے کے انداز پر ہشام رمیز نے اعتراض کیا ہے، تاہم آئی ایم ایف کے اس توہین آمیز طریقے کی وجہ اس سالانہ سرگرمی میں شرکت نہیں کی تھی۔

اس سے پہلے مرسی حکومت کے ساتھ کئی ماہ تک جاری رہنے والے مذاکرات کے باوجود چار اعشاریہ آٹھ ارب ڈالر کے قرضے کے معاہدے پر مصر اور آئی ایم ایف نہیں پہنچ سکے تھے۔

اسی ماہ کے آغاز میں آئی ایم ایف کی سربراہ نے مصر کی قومی معیشت کے استحکام کے لیے مدد دینے اور مصر کے ساتھ مل کر کام کرنے پر آمادگی ظاہر کی تھی۔

مصر سے آنے والی رپورٹس کے مطابق مصر کی عبوری حکومت آئی ایم ایف کے ساتھ از سر نو مذاکرات کے لیے مقابلتا جلدی میں ہے تاکہ سیاسی مشکلات کا شکار حکومت اقتصادی حوالے سے اصلا حات کر سکے۔

تاہم متحدہ عرب امارات، سعودی عرب، اور کویت کی طرف سے خطیر امداد کے اعلانات کے باوجود مصر ادائیگیوں کے توازن کے مسئلے اور ایندھن کے اخراجات کے حوالے سے مشکلات کا شکار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں