دنیا کی سب سے بڑی بنک ڈکیتی، 55 ملین ڈالر لوٹے گئے

لیبیا مرکزی بنک کی گاڑی "کیش وین" پر دس مسلح افراد کی کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مسلح افارد نے لیبیا کے مرکزی بنک کی کیش لے جانے والی گاڑی پر حملہ کر کے 55 ملین ڈالر لوٹ لیے ہیں۔ یہ واقعہ لیبیا کے شہر سیرت میں پیش آیا۔ کسی بنک کی اتنی بڑی رقم لوٹے جانے کا یہ پہلا واقعہ ہے۔

بتایا گیا ہے کہ کیش وین میں مختلف کرنسیوں سے متعلق کیش موجود تھا جسے سیرت میں لیبیا کے مرکزی بنک کی برانچ میں منتقل کیا جانا تھا، کہ دس مسلح افراد نے گاڑی کوراست میں ہی لوٹ لیا۔

تفصیلات کے مطابق طرابلس سے 500 کلو میٹر دور مشرق میں واقع شہر سیرت کے ائیر پورٹ سے کیش وین بنک کی طرف جا رہی تھی کہ انتہائی مسلح دس افراد کے ایک گروپ نے آتے ہوئے راستے میں نشانہ بنایا اور بحفاظت فرار ہو گئے۔

بنک ذرائع کے مطابق گاڑی میں 42 ملین امریکی ڈالرز کی مالیت 53 ملین دینار اور 12 ملین امریکی ڈالر کیش کی صورت موجود تھے۔ جبکہ سکیورٹی اہکاروں کی صرف ایک گاڑی اس کیش وین کی حفاظت پر مامور تھی۔

فوری طور پر کسی نے اس کارروائی کی ذمہ داری قبول نہیں کی، تاہم شکوک کی زد میں وہی مسلح گروہ ہیں جنہوں 2011 میں معمر قذافی کے اقتدار کے خاتمے کیلیے بنیادی کردار ادا کیا ہے اور اب بھی مسلح ہیں۔

واضح رہے لیبیا کے وزیر اعظم علی بن زیدان کو بھی دس اکتوبر کو ایک ہوٹل سے مسلح افراد نے اٹھا لیا تھا، تاہم بعد میں معلاوم ہوا کہ انہیں وزارت داخلہ نے ہی حراست میں لیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں