اسرائیل مزید 1500 یہودیوں کیلیے بستی قائم کریگا

مشرقی یروشلم میں ہی سیاحتی مرکز اور نیشنل پارک کی تعمیر ہو گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اسرائیل نے اعلان کیا ہے کہ مغربی یروشلم میں مزید 1500 یہودی آبادکاروں کو بسانے کیلیے یہودی بستی قائم کرے گا، اس امر کا فیصلہ بدھ کے روز اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو اور وزیر داخلہ گائِدین سار کی طرف سے سامنے آیا ہے۔

اس نئی یہودی بستی کے قیام کا باضاطہ اعلان اسرائیل کے فوجی ریڈیو سے کیا گیا ہے۔ یہ اعلان ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب اسرائیل اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان امن مذاکرات پھر سے شروع ہیں اور بنجمن نیتن یاہو امریکی صدر سے ایک ماہ میں دوسری ملاقات کر کے واپس آئے ہیں۔

اسرائیل کے فوجی ریڈیو کے مطابق یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ اس مجوزہ بستی کے علاوہ مشرقی یروشلم میں دو مزید منصوبے بھی شروع کیے جائیں گے۔ جن میں ایک سیاحتی مرکز اور ایک نیشنل پارک کی تعمیر شامل ہو گی۔

واضح رہے اسرائیل نے ماہ اگست میں 2000 نئے گھر بنانے کا اعلان کیا تھا، تاہم عالمی قانون اور فلسطینیوں کے موقف کے مطابق 1967 کے بعد قبضے میں لیے گئے علاقوں میں یہودی بستیوں کی تعمیر جائز نہیں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں