.

غزہ پر اسرائیلی حملے، ایک فلسطینی جاں بحق، ایک زخمی

اسرائیلی فوج نے ٹینکوں اور طیاروں سے شیلنگ کی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج کی طرف سے کی گئی شیلنگ کے نتیجے میں جمعرات کے روز حماس کے عسکری ونگ کا رکن ربیع باریخ جاں بحق اور ایک فلسطینی زخمی ہو گیا ہے۔ اس امر کا اعلان فلسطینی سکیورٹی اور میڈیکل کے شعبے سے متعلق ذرائع نے کیا ہے۔

اسرائیل کے جنگی طیاروں نے غزہ شہر کے مشرقی حصے میں بھی کارروائی کی ہے تاہم اس کے نتیجے میں ہونے والے جانی نقصان کی اطلاع سامنے نہیں آئی ہے۔

حماس کے ٹی وی کے مطابق یہ اسرائیلی کارروائیاں غزہ سے اسرائیل کے جنوب میں پھینکے گئے تین مارٹر گولوں کے بعد سامنے آئی ہیں، تاہم یہ نہیں بتایا گیا کہ یہ مارٹر گولے کس نے فائر کیے تھے۔

حماس کے حکام کے مطابق ربیع باریخ غزہ سے متعلق اسرائیلی کارروائیوں اور سرگرمیوں کی مانیٹرنگ کے شعبے سے وابستہ تھا، اسرائیلی فوج نے ربیع اور اس کے ساتھی کو خان یونس کے مشرقی علاقے میں شیلنگ کا نشانہ بنایا ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق ایک اسرائیلی فوج کے ٹینک اور ایک آرمڈ بلڈوزر نے 100 گز اندر آ کر غزہ میں کارروائی کی۔ دوسری طرف اسرائیلی فوجی ترجمان نے ایک عالمی خبر رساں ادارے کو بتایا ہے کہ ''غزہ سے نکالی گئی سرنگوں کے بعد اسرائیلی فوج دفاعی ضرورت کے تحت طے شدہ اہداف کو نشانہ بنا رہی ہے۔''

اس کے مقابلے میں حماس کے القسام ملٹری ونگ کا کہنا ہے اس نے گزشتہ ماہ اسرائیلی فوجیوں کو اغوا کرنے کیلیے سرنگ کھودی تھی تاکہ فلسطینی قیدیوں کی رہائی کے لیے ان اغوا کیے گئے فوجیوں کو استعمال کیا جا سکے۔

یاد رہے اسی ہفتے کے آغاز میں پیر کے روز اسرائیل کی جانب سے فضائی حملہ 14 اگست کے بعد اسرائیلی فوج کا پہلا حملہ تھا۔ تاہم اب اسرائیلی فوج نے زیادہ جارحانہ انداز اختار کرنے کے اشارے دیے ہیں۔