اسرائیل نے ایرانی جوہری پروگرام پر معاہدہ مسترد کر دیا

اسرائیل کے دفاع اور سلامتی کے لیے ہر اقدام کریں گے: نیتن یاہو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائِیل نے ایران کے متنازعہ جوہری پروگرام کے سلسلے جنیوا مذاکرات کے کامیابی کی طرف بڑھنے اور مجوزہ سمجھوتے کو مسترد کیا ہے ۔ بنجمن نیتن یاہو نے یہ بات واشنگٹن کے اعلی ترین سفارت کاروں سے ملنے کے بعد کہی ہے۔

نیتن یاہو نے اخبار نویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ''میں نے جیسا کہ جان کیری سے بھی کہا ہے کہ ایران اگر یہ سمجھوتہ کرنے میں کامیاب ہو گیا تو یہ صدی کا سب سے بڑا سمجھوتہ ہو گا۔''

نیتن یاہو نے کہا ''اسرائیل اسے مسترد کرتا ہے ، یہ بات جو میں کہہ رہا ہوں یہ علاقے میں دوسروں نے بھی شئیر کی ہے البتہ یہ فرق ہے کہ کوئی اسے کھلے عام کہتا ہے اور کوئی نہیں۔''

انہوں نے مزید کہا '' اسرائیل اس معاہدے کے بعد اپنے دفاع اور اپنے عوام کی حفاظت کیلیے جو کچھ ضروری ہو گا اسرائیل وہ سب کچھ کرے گا۔''

واضح رہے جنیوا میں ایرانی جوہری تنازعے کے حوالے سے جاری مذاکرات سے اسرائیل سخت نالاں ہے، جبکہ ایرانی وفد کے سربراہ نے امید ظاہر کی ہے اس کا عالمی طاقتوں کے ساتھ معاہدہ ہو جائیگا۔

ایران کے نسبتا اعتدال پسند صدر نے جون میں اپنے انتخاب کے بعد مسلسل عالمی طاقتوں سےرابطہ رکھ کر ایرانی ٹریک سے ہٹی ہوئِ سفارت کاری متعارف کرائی ہے۔ اس صورت حال میں اسرائیل یہ انتباہ بھی کر چکا ہے کہ اسے اکیلے ہی ایران کے جوہری پروگرام کو نشانہ بنانا پڑا تو وہ ایسا کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں