مغربی کنارا: اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے فلسطینی شہید

بارہ گھنٹوں میں دو فلسطینی شہید کر دیے گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے فائرنگ کے ایک فلسطینی نوجوان کو شہید کردیا ہے۔ اسرائیلی پولیس کےترجمان کا کہنا ہے کہ فلسطینی کو اسرائیلی فوج نے مغربی کنارے کے علاقے میں اس وقت گولیاں ماریں جب اسے ایک چیک پوسٹ کے قریب روک کر تلاشی لینے کی کوشش کی، لیکن اس نے مبینہ طور پر سیکیورٹی اہلکاروں پر تیز دھارآلے سے حملہ کرنا چاہا جسے ناکام بنا دیا گیا۔

خیال رہے کہ مغربی کنارے میں چند گھنٹوں کے وفقے سے اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے مارا جانے والا یہ دوسرا فلسطینی ہے۔
صہیونی پولیس ترجمان کا کہنا ہے کہ مشتبہ فلسطینی کو مغربی کنارے اور بیت المقدس کے درمیان ایک چیک پوسٹ کے قریب روکا گیا، تواس نے بارڈر پولیس پرخنجر سے حملے کی کوشش کی جس پر سیکیورٹی اہلکاروں کو گولی چلانا پڑی ہے۔

حملے میں مارے جانے والے فلسطینی نوجوان کی میت مغربی کنارے کے شہر الخلیل میں پہنچا دی گئی ہے۔ میڈیکل عملے نے نوجوان کی شناخت کے بعد بتایا ہے کہ اس کا تعلق الخلیل شہر سے ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق جمعرات کی شام اسی طرح کے ایک واقعے میں اسرائیلی فوجیوں نے ایک فلسطینی کو گولیاں مار کر شہید کردیا تھا۔ اسرائیلی پولیس کے بیان کے مطابق فلسطینی شہری کو اس وقت گولیاں ماری گئیں جب اس نے ایک بس اڈے پر یہودی آباد کاروں پرآتش گیر مادے سے حملے کی کوشش کی تھی۔

خیال رہے کہ مغربی کنارے میں تازہ کشیدگی ایک ایسے وقت میں پیدا ہوئی ہے جب حال ہی میں امریکی وزیر خارجہ جان کیری علاقے کا دورہ کرکے واپس گئے ہیں۔ فلسطین۔ اسرائیل امن مذاکرات کی بحالی کے بعد مغربی کنارے میں اسرائیلی فوج کے ہاتھوں دس فلسطینی شہید اور تین اسرائیلی فوجی ہلاک ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں