.

عراق میں تشدد کے واقعات، خاتون افسر سمیت سات ہلاک

بغداد، موصل، بصرہ وغیرہ میں پچاس افراد زخمی ہو گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں جاری تشدد کی لہر کے دوران موصل شہر میں سات افراد ہلاک جبکہ پچاس زخمی ہو گئے ہیں۔ تشدد کے یہ واقعات ایک ماہ سے جاری ہیں، تاہم محرم الحرام کے دوران شیٰعہ فرقے کی سرگرمیوں کے باعث قدرے تیزی آ گئی ہے۔

عراق میں جاری آپریشن کے باوجود ان بڑھتی ہوئِی کارروائیوں کی وجہ سے آئے روز ہلاکتیں ہو رہی ہیں۔ اس صورتحال میں ترکی نے ایک روز پہلے اتوار کو عراقی حکومت کو تعاون دینے کی پیش کش کی ہے۔

صرف اتوار کے روز عراق کے چھ شہروں میں بم دھماکوں اور فائرنگ کے واقعات ہوئے ہیں۔ ایک خود کش بمبار نے فوج کے بھرتی مرکز کے پاس خود کو دھماکے سے اڑا لیا، جس سے دو افراد ہلاک اور سات زخمی ہو گئے۔

اسی طرح ایک معروف ریستوران پر بم حملے کے نتیجے میں مزید دو افراد ہلاک اور دس زخمی ہوئے، جبکہ شہر میں مار دھاڑ کے واقعات مسلسل ہوتے رہے۔ اسی دوران خاتوں سرکاری افسر کی بغداد میں ہلاکت کی اطلاع سامنے آئی ہے۔

ایسے ہی پر تشدد واقعات کی اطلاعات بصرہ، سماوا،میں بھی پیش آئے ہیں جن میں مجموعی طور پر 20 زخمی ہو گئے ہیں۔