.

''امریکی پٹریاٹ میزائل مزید ایک سال ترکی میں رہیں گے''

امریکی وزیر دفاع اور ترک وزیر خارجہ کا پینٹاگان میں اتفاق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا نے اعلان کیا ہے کہ اس کے پیٹرییات میزائلوں کا نظام ایک سال تک مزید ترکی میں برقرار رکھا جائے گا۔ یہ فیصلہ ترکی کو شامی خانہ جنگی سے پیدا شدہ خطرات سے بچانے کیلیے کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں ترک وزیر خارجہ کو پینٹاگان میں ایک ملاقات کے دوران امریکی وزیر دفاع چک ہیگل نے باضابطہ بتایا ہے۔

ترک وزیر خارجہ آجکل شامی مسئلے پر تبادلہ خیال کیلیے امریکی دورے پر ہیں، جہاں انہوں نے ایک نیٹو اتحادی کے طور پر پینٹاگان میں وزیر دفاع سے بھی ملاقات کی ہے۔ اس سلسلے میں پینٹاگان کے ترجمان نے ایک بیان بھی جاری کیا ہے۔

اس سے پہلے ترکی نے نیٹو سے درخواست کی تھی کہ زمین سے فضا میں مار کرنے والے پٹریاٹ میزائیلوں کی ترکی میں موجودگی کی مدت میں اضافہ کیا جائے تاکہ ترک ائیر ڈیفینس کی ضروریات پوری ہوتی رہیں۔

واضح رہے ترکی اور شامی سرحد پر نیٹو ممالک ہالینڈ، اور جرمنی نے کل چھ پیٹریاٹ میزائل بیٹریاں نصب کر رکھی ہیں۔ ترکی ایک زمانے میں بشارالاسد کو اتحادی رہ چکا ہے لیکن اب ترکی بشار رجیم کیخلاف لڑنے والی شامی اپوزیشن کی حمایت کرتا ہے۔

پینٹاگان میں امریکی وزیر دفاع نے اپنے ترک مہمان کو شامی کیمیائی ہتھیاروں کے حوالے سے تازہ ترین صورتحال سے آگاہ کیا، جبکہ شامی پناہ گزینوں کی ترکی آمد کے بارے میں امریکی وزیر دفاع کو بتایا گیا کہ ترک حکومت کس طرح یہ مالی بوجھ برداشت کر رہی ہے۔