.

ایرانی سفارت خانہ بم حملے، عالمی قائدین کیطرف سے مذمت

مذمت کرنیوالوں میں بانکی مون، جان کیری، آشٹن کیتھرائن بھی شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان کے دارالحکومت بیروت میں ایرانی سفارت خانے پر منگل کے روز پے در پے دو بم حملوں کی عالمی رہنماوں نے مذمت کرتے ہوئے لبنان میں امن و استحکام کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بانکی مون نے ایرانی سفارت خانے پر بم دھماکوں کی مذمت کی ہے، یورپی یونین کے خارجہ امور کی سربراہ کیتھرائن آشٹن لبنان میں امن کیلیے امن کی اپیل کی ہے، جبکہ لبنان کے صدر مائیکل سلیمان نے ایرانی صدر حسن روحانی سے فون پر بات کے اس واقعے پر اظہار افسوس کیا ہے۔

لبنان کے صدر نے لبنان میں ایرانی سفیر غضنفر رکن آبادی سے بھی بات کی ہے۔ واضح رہے کہ منگل کی صبح ہونے والے بم دھماکے جنوبی بیروت کے اس حصے میں ہوئے تھے جو حزب اللہ کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔

لبنان کے صدر نے کویت میں عرب اور افریقی ممالک کی مشترکہ سربراہ کانفرنس میں شرکت کے موقع پر قومی اتحاد کی ضرورت پر زور دیا ہے اورعوام سے اپیل کی ہے کہ وہ کسی بھی تخریبی عمل سے بچنے کیلیے خود کو چوکس رکھیں۔

انہوں نے مزید کہا ''دہشت گرد اور جرائم پیشہ عناصر معصوم شہریوں کی جانیں لے کر ہمارے عزم پر اثر انداز نہیں ہو سکتے، دہشت گردی کا وقت کے پہیے کو الٹا گھومنے پر مجبور نہیں کر سکتی ہے۔''

امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے بھی بیروت بم دھماکوں کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ یہ حملہ احمقانہ اور مایوسی کا نتیجہ ہے۔'' دریں اثناء روس نے بھی اس واقعے کو خونی کارروائی قرار دیکر اس کی مذمت کی ہے، واضح رہے روس اور ایران دونوں کو شامی صدر بشارالاسد کے سب سے اہم اتحادی ہیں۔