.

''شامی جنگ زدہ عوام کی مدد کی راہ میں رکاوٹیں دور کی جائیں''

اقوام متحدہ نے سعودی عرب کی پیش کردہ قرارداد منظور کر لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے شام میں جنگ زدہ علاقوں میں گھرے عوام کی انسانی بنیادوں پر امداد کیلیے سعودی عرب کی پیش کردہ قرارداد منظور کر لی ہے۔

قرار داد کی منظوری جنرل اسمبلی کی تھرڈ کمیٹی کی جانب سے دی گئی ہے۔ قرارداد میں شام سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ شام دفتری ہتھکنڈوں اور دوسرے طریقوں سے امدادی سرگرمیوں کی راہ میں رکاوٹیں نہ ڈالے۔

اقوام متحدہ کی کمیٹی کی طرف سے منظور کردہ اس قرارداد میں کہا گیا ہے کہ '' شامی مسئلے کی وجہ سے انسانی المیے کی سطح بہت بڑھ گئی ہے۔ اس لیے ضروری ہے کہ فوری طور پر امدادی کارروائیوں کو آسان اور محفوظ بنانے کیلیے اقدامات کیے جائیں۔

قرارداد میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ شامی حکام فوری طور پر انسانی بنیادوں پر امدادی سرگرمیوں کا دائرہ بڑھانے کیلیے ضروری آسانیاں فراہم کریں۔

منگل کو منظور کی گئی قرارداد میں دبے لفظوں میں 21 اگست کو شام میں کیمیائی ہتھیاروں سے ہونے ولی ہلاکتوں کی ذمہ داری شامی حکومت اور شامی فوج پر عاید کی گئی ہے۔

قرارداد میں ستمبر میں سامنے آنے والی اقوام متحدہ کی رپورٹ کا ذکر کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ زمین سے زمین پر مار کرنے والے میزائل سرکاری زیر قبضہ علاقوں سے اپوزیشن کے علاقوں میں فائر کیے گئے تھے۔

واضح رہے اقوام متحدہ کے اندازے کے مطابق شام کے 68 لاکھ شہریوں کو انسانی بنیادوں پر امداد کی ضرورت ہے۔