.

عراق: ٹرک بم دھماکے سمیت متعدد دھماکے، 48 ہلاک

ٹرک بم دھماکہ سبزی منڈی میں کیا گیا، 31 ہلاک، 45 زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق جو ان دنوں مسلسل دھماکوں اور کار بم دھمکوں کا نشانہ بنا ہوا ہے میں مزید 48 افراد لقمہ اجل بن گئے ہیں۔ سب سے زیادہ نقصان ایک خوف ناک ٹرک بم دھماکہ سے ہوا، جس کے نتیجے میں کم ازکم 31 افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوگئے ہیں۔

یہ دھماکہ ایک سبزی منڈی میں کیا گیا ہے جہاں عام طور پر ٹرکوں پر سبزیاں اور پھل لائے جاتے ہیں۔ اسی وجہ سے کسی کا اس جانب دھیان ہی نہیں گیا کہ ٹرک کو بم دھماکے کیلیے استعمال کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ٹرک بم دھماکہ دارالحکومت بغداد سے شمال مشرق میں تقریبا ایک سو چالیس کلومیٹر کے فاصلے پر ایک قصبے سادیہ کی سبزی منڈی میں کیا گیا ہے۔

عیی شاہدوں نے پولیس کو بتا یا '' ایک شخص نے سبزی منڈی میں ایک ٹرک لا کے کھڑا کیا اور مزدوروں سے کہا کہ ٹرک سے سامان اتار دیں۔ اسی دوران ٹرک میں دھماکہ ہو گیا۔ جس سے 31 افراد موقع پر جاں بحق اور 45 زخمی ہوگئے۔ وزارت صحت کے ذرائع نے بھی ان ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے۔

بغداد کے شمال ہی میں ایک اور واقٰعے میں ایک خود کش بمبار نے تاجی نامی قصبے میں فوجی چیک پوسٹ پر خود کو دھماکے سے اڑا لیا ۔ چھ فوجی ہلاک جبکہ 12 زخمی ہو گئے۔

عراقی دارالحکومت کے نزدیک ایک فوجی افسر کی گاڑی میں نصب کیے گئے بم کے پھٹنے سے فوجی افسر کا بیٹا ہلاک ہو گیا جبکہ پانچ سویلین زخمی ہو گئے ہیں۔ اتفاق سے دھماکے کے وقت فوجی افسر گاڑی پر سوار نہیں تھا۔

بغداد میں ایک اور کار بم دھماکے کے نتیجے میں آٹھ شہری ہلاک جبکہ 15 زخمی ہو گئے۔ یہ کار بم دھماکہ امیریہ میں کیا گیا ۔ ایک اور واقعے میں بغداد کے جنوبی علاقے میں گولی لگنے سے دو افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ ان واقعات سے محض دو روز قبل عراق میں 35 افراد دھماکوں کا نشانہ بنے تھے۔ اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ کے مطابق گزشتہ آٹھ ماہ کے دوران 5500 عراقی مارے جا چکے ہیں۔