شامی شہر حلب میں باغیوں اور سرکاری فوج میں گھمسان کی جنگ

اسدی فوج کے باغیوں پر بیک وقت زمینی اور فضائی حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام میں انسانی حقوق کے کارکنوں کی فراہم کردہ اطلاعات کے مطابق ساحلی شہر حلب کے مغربی محاذ پر جیش الحر اور سرکاری فوج کے درمیان گھمسان کی جنگ جاری ہے۔ باغی ذرائع کے مطابق حلب کے مغرب میں صلاح الدین، الاذاعہ اور سیف الدولہ کالونیوں میں اب تک کی خون ریز جھڑپیں ہوئی ہیں۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سرکاری فوج نے حلب میں جامع مسجد الناصر اور جامع الخضر کے آس پاس کےعلاقوں میں زمینی حملے کیے ہیں اور کئی مقامات پر چھاپے مارے گئے ہیں۔ اس کے ساتھ الاذاعہ کالونی پر بھاری توپخانے سے گولہ باری کی گئی ہے۔

ادھر دمشق میں انسانی حقوق کے کارکنوں نے مشرقی الغوطہ اور دیگر اہم مقامات پر باغیوں کے کنٹرول کی تصدیق کی ہے۔ انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ مشرقی الغوطہ اور اس کے نواحی علاقوں الجربا، العبادہ، القاسمیہ، البحاریہ، القیسا اور دیر سلیمان میں جیش الحر نے بشار الاسد کی فوج اور حزب اللہ کے جنگجوؤں کے ساتھ خون ریز معرکے کے بعد قبضہ کر لیا ہے۔ ان علاقوں پرجیش الحر کا کنٹرول اہم ترین پیش رفت قرار دی جا رہی ہے۔ یہ علاقے پچھلے کئی ماہ سے باغیوں اور بشارالاسد کی وفادار فوجیوں کے درمیان میدان جنگ رہے ہیں۔

انقلابی کمیٹیوں کے ذرائع کے مطابق مشرقی الغوطہ میں سرکاری فوج کو پسپائی کے ساتھ بڑے پیمانے پر مادی نقصان بھی پہنچایا گیا ہے۔ باغیوں کے حملوں میں درجنوں ٹینک اور فوجی ٹرکوں کو تباہ کردیا گیا ہے۔ انہی علاقوں میں لڑائی کے دوران جیش الحرنے لبنان اور عراق کے کئی اجرتی قاتلوں کو گرفتار بھی کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں