عراق پھر لہو لہو، ایک ہی دن میں 50 افراد زندگی کی بازی ہار گئے

ہلاک ہونے والوں میں دو قبائلی سردار اور ایک میجر بھی شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عراق میں ایک ہی دن میں 50 سے زائد ہلاکتیں ہوئی ہیں۔ زیادہ تر ہلاکتیں بغداد کے گرد وپیش او رملک کے سنی علاقوں میں ہوئی ہیں۔

جن علاقوں میں پر تشدد کارروائیوں کا سلسلہ تیز رہا، ان میں سنی علاقے دیالہ، نینوا، اور صوبہ صلاح الدین بطور خص شامل ہیں۔ کرکوک شہر میں بھی پرتشدد واقعات رونما ہوئے ہیں۔

جمعہ کے روز سب سے پہلے 18 افراد کی لاشیں ملنے سے خونی وارداتوں کا آغاز ہوا۔ یہ لاشیں بغداد سے کچھ ہی فاصلے پر شمال کی جانب سے ملیں۔

قتل کے بعد پھینک دی گئی ان لاشوں میں دو قبائلی سرداروں، ایک فوجی میجر، چار پولیس اہلکاروں، سمیت عام لوگوں کی لاشیں تھیں۔ تمام لاشوں کو سنی قصبے تارمیہ کے کھیتوں میں دبایا گیا تھا۔

سکیورٹی ذرائع کے مطابق ہلاک کیے گئے ان تمام افراد کو سروں اور سینوں میں گولیاں ماری گئی تھیں۔ عراق میں قتل و غارت کے یہ بڑھے ہوئے واقعات کے محض چند روز بعد پیش آئے ہیں جب بغداد میں مختلف جگہوں سے 19 لاشیں ملی تھیں۔ ان میں سے آٹھ کی آنکھوں پر پٹیاں بندھی ہوئی تھیں جبکہ چھ لاشیں ایک نہر سے ملی تھیں۔

پچھلے ایک ہفتے کے دوران مجموعی طور پر پورے عراق میں 200 ہلاکتیں ہوئی ہیں، جبکہ ایک سال میں مارے جانے والوں کی تعداد 6000 ہے۔ اس ناطے عراق میں جمعے کے دن صرف ایک دن میں 50 ہلاکتیں سامنے آئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں