.

قاہرہ: قطر کا قومی پرچم نذر آتش، سفیر کی بیدخلی کا مطالبہ

مظاہرین نے ہاتھوں میں جنرل سیسی کی تصاویر اٹھا رکھی تھیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری دارلحکومت قاہرہ میں قطر کے سفارتخانے کے باہر ہونے والے احتجاجی مظاہرے میں قطری سفیر کی ملک بدری کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ اس مظاہرے کی منظوری مصری وزارت داخلہ نے دی تھی۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق مظاہرین قطر کے خلاف نعرے بازی کر رہے تھے اور اس بات معترض تھے کہ قطر، تیس جون کے 'انقلاب' کے باوجود اخوان المسلمون کی حمایت کر رہا ہے۔

مظاہرے میں شریک افراد نے قطری پرچم کو پھاڑ کر اسے آگ لگا دی۔ متعدد مظاہرین نے اس موقع پر اپنے ہاتھوں میں وزیر دفاع جنرل عبدالفتاح السیسی کی تصاویر اٹھا رکھی تھیں۔

مصری ذرائع ابلاغ نے سیکیورٹی حکام کے حوالے سے بتایا ہے مظاہرین نے وزارت داخلہ سے قطری سفارتخانے کے باہر تین گھنٹے تک احتجاج کی باقاعدہ اجازت لی تھی۔ اس موقع پر دوحہ کے سفارتخانے کے باہر سیکیورٹی اہلکاروں کی بڑی تعداد تعینات تھی۔

اسی سال اگست میں مصری وزارت خارجہ نے ایک بیان میں قطر کی وزارت خارجہ کے اہم عہدیدار کے اس بیان پر شدید ردعمل کا اظہار کیا تھا جس میں اخوان المسلمون کے منتخب صدر کی بیدخلی کے خلاف احتجاجی دھرنے دینے والے کارکنوں کو منتشر کرنے کے لئے مصری فوجی طاقت کے استعمال کی مذمت کی تھی۔

دفتر خارجہ کے بیان میں مذید کہا گیا کہ مصری حکام کا بیان زمینی حقائق کے خلاف ہے کیونکہ قاہرہ نے قطر سمیت بین الاقوامی دنیا کو یہ باور کرانے کی کوشش کی تھی کہ وہ تشدد کی راہ سے گریز کرتے ہوئے ہوش اور عقلمندی کا مظاہرہ کریں۔