شامی اپوزیشن اتحاد کے سربراہ احمد الجربا روس جائیں گے

جنیوا ٹو کے بارے میں فیصلہ دسمبر کے وسط میں کریں گے: جارج صبرا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام میں اپوزیشن اتحاد کے سربراہ احمد الجربا نے اعلان کیا ہے کہ وہ جنیوا ٹو شروع ہونے سے پہلے روس کا دورہ کریں گے۔ احمد الجربا نے ان خیالات کا اظہار کویت میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا ہے۔

شامی اپوزیشن اتحاد کے سربراہ نے کہا انہیں روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کی طرف سے تقریبا 20 روز قبل روس کے دورے کی دعوت ملی تھی لیکن اپنے پہلے سے طے شدہ مصروفیات کی وجہ سے نہیں جا سکے ہیں۔ انہوں نے کہا ''اب بھی یہ کہنا مشکل ہے کہ کن تاریخوں میں روسی دورے پر جا سکوں گا تاہم جنیوا ٹو سے پہلے اس کا امکان ہے ۔''

واضح رہے روس شام کے صدر بشارالاسد کاسب سے بڑا اتحادی ہے، تاہم شامی تنازعے کے حل کیلیے وہ جنیوا امن کانفرنس کی حمایت کرتا ہے۔

احمد الجربا نے کہا '' میں نے روس جانے اور شامی مسئلے حل کیلیے بات چیت کی دعوت قبول کر لی تھی۔'' ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا '' شامی اپوزیشن نے جنیوا ٹو میں شرکت کا فیصلہ اپنی ان شرائط کے تابع کیا ہے جن میں یہ بھی شامل ہے کہ بشارالاسد کا عبوری حکومتمیں کوئی کردار نہیں ہو گا۔''

ان کا مزید کہا تھا '' جنیوا ٹو میں شرکت کیلیے یہ لازم ہو گا کہ زیر محاصرہ علاقوں تک ریلیف ورکرز کو رسائی دی جائی گی اور اسیر عورتوں اور بچوں کو رہا کیا جائے گا، اس سلسلے احباب شام میں شامل گیارہ ممالک نے بھی حمایت کی ہے ۔''

داریں اثنا شامی اتحاد میں شامل اہم جماعت شامی قومی کونسل کے سربراہ جارج صبرا نے کہا '' جنیوا ٹو میں شرکت کرنے یا نہ کرنے کا حتمی فیصلہ ابھی نہیں کیا گیا، اس بارے مین فیصلہ ماہ دسمبر کے وسط میں کیا جائے گا۔''

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں