.

مالکی کی روحانی کو ایرانی مزدوروں کے قتل کی تحقیقات کی یقین دہانی

دیالی میں حملے کا نشانہ بننے والے ایرانی کمپنی کے ملازم تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے وزیر اعظم نوری المالکی نے ایرانی صدر ڈاکٹر حسن روحانی کو یقین دلایا ہے کہ بغداد حکومت ضلع دیالی میں ایک ایرانی کمپنی کے ساتھ کام کرنے والے مزدوروں کے قتل میں ملوث عناصر کو کیفرکردار تک پہنچائیں گے۔

عراقی وزیراعظم کے دفتر سے جاری ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ دو روز قبل شمال مشرقی ضلع دیالی میں نامعلوم مسلح حملہ آوروں کی فائرنگ سے ڈیرھ درجن ایرانی مزدوروں کی ہلاکت کے بعد وزیر اعظم المالکی نے ایرانی صدر حسن روحانی کو ٹیلیفون کیا اور انہیں یقین دلایا کہ بغداد ایرانی اورعراقی باشندوں کے قاتلوں کو پکڑ کر انہیں قرار واقعی سزا دے گی۔

بیان میں ضلع دیالی میں مسلح کارروائی میں عراق اور ایران کے ماہرین اور مزدوروں کی ہلاکت کو مجرمانہ کارروائی سے تعبیر کیا گیا ہے اور یہ بتایا گیا ہے کہ مرنے والے تمام افراد گی پائپ لائن کے ایک منصوبے پر کام کر رہے تھے۔

بیان میں واضح کیا گیا ہے کہ دہشت گردی کی اس گھناؤنی واردات کے باوجود بغداد ۔ تہران تعلقات متاثر نہیں ہوں گے۔ وزیراعظم کے حکم پر متعلقہ حکام نے واقعے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں، دہشت گردوں کو ان کے کیے کی سزا جلد ملے گی۔

خیال رہے کہ جمعہ کے روز شمال مشرقی ضلع دیالی میں ایک گیس پائپ لائن میں کام کرنے والے تیرہ ایرانی اور تین عراقی مزدوروں کو نامعلوم حملہ آوروں نے فائرنگ کرکے قتل کردیا تھا۔ پولیس کے مطابق یہ واقعہ بغداد کے شمال مشرق میں پچہتر کلومیٹر دور اس وقت پیش آیا جب تین گاڑیوں پر سوار نقاب حملہ آوروں نے گیس پائپ لائن بچھانے میں مصروف مزدوروں پر فائرنگ کر دی تھی۔
قبل ازیں ہفتے کے روز عراقی وزیراعظم اسی واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ایرانی قوم سے اس کی تعزیت بھی کر چکے ہیں