.

اسدی فوج کے شہریوں پر بارود سے بھرے ڈرموں سے حملے

گنجان آباد کالونیوں میں غیر معمولی جان نقصان کا اندیشہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں انسانی حقوق کے کارکنوں نے بتایا کہ صدر بشارالاسد کی وفادار فوج نے حلب شہر کی کئی گنجان آباد کالونیوں میں پٹرول اور دھماکہ خیز مواد سے بھرے ڈرم گرائے ہیں جس سے بڑے پیمانے پر جانی نقصان کی اطلاعات ہیں۔

پٹرول سے بھری ڈرموں کے ذریعے کئے جانے والے حملوں سے کئی کالونیوں میں بڑے پیمانے پر تباہی پھیلنے اور مکانات منہدم ہونے کی خبریں موصول ہوئی ہیں۔ غیرمعمولی تباہ کن حملوں کے نتیجے میں مقامی آبادی نقل مکانی پر بھی مجبور ہے لیکن مسلسل بمباری کے باعث شہریوں کو محفوظ ٹھکانوں تک رسائی میں بھی سخت مشکلات پیش آ رہی ہیں۔

انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ سرکاری فوج نے گذشتہ کئی روز سے حلب کی باغیوں کے زیرانتظام ھنانو، الصاحور، الباب روڈ، سیف الدولہ، جامع مسجد النصر، الحیدریہ، ارض الحمراء اور وعشرکالونیوں پربمباری جاری رکھی ہوئی ہے۔ گذشتہ دو روز سے ان کالونیوں تک سماجی کارکنوں اور امدادی اداروں کو رسائی میں مشکلات کا سامنا ہے۔

ادھر دمشق کے مشرقی الغوطہ،ریما، مزارع عالیہ، الصحالیہ کالونیوں پر بھی جنگی جہازوں کے ذریعے وحشیانہ بمباری کی اطلاعات ہیں جس سے متعدد افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔ شمالی دمشق میں عدرا کالونی اور حرستا شہر میں باغیوں اور سرکاری فوج کے درمیان خونریز جھڑپوں کی اطلاعات ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ادلب شہر کی وادی الضیف، معرہ النعمان اور التمانعہ میں جنگی جہازوں کے ذریعے پٹرول ڈرم حملوں اور بری فوج کی جانب سے بھاری توپخانے سے حملے کیے گئے ہیں۔ باغیوں کی جانب سے بھی اسدی فوج اور اس کی حامی ملیشیا کے خلاف بھرپور جوابی کارروائی کی گئی ہے۔ جھڑپوں میں شدت آنے سے کئی علاقوں سے رابطے منقطع ہو چکے ہیں۔