شامی فضائیہ کی حلب میں بمباری سے مزید 42 ہلاکتیں

حانانو میں ایک شاہراہ پر تباہ کن بیرل بموں کے حملے میں متعدد کاریں تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شامی فضائیہ نے اتوار کو شمالی شہر حلب میں ایک شاہراہ پر کاروں کے قافلے پر بمباری کی ہے جس کے نتیجے میں بیالیس افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق نے بتایا ہے کہ شامی فضائِیہ کے جنگی طیاروں نے حلب کے علاقے میں حانانو میں تباہ کن بیرل بم پھینکے ہیں۔اس حملے میں مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر بیالیس ہوگئی ہے۔

شامی فضائیہ نے گذشتہ ایک ہفتے کے دوران متعدد مرتبہ خام بیرل بموں سے حلب کے مختلف علاقوں کو نشانہ بنایا ہے جس کے نتیجے میں سیکڑوں افراد مارے جاچکے ہیں۔

شہری صحافیوں کے نیٹ ورک پر مشتمل حلب میڈیا سنٹر نے بتایا ہے کہ حانانو میں شامی جنگی طیاروں نے ایک شاہراہ پر کاروں کے ایک قافلے پر بم پھینکے ہیں۔اس حملے میں بہت سی کاریں تباہ ہوگئی ہیں اور ان میں سوار کوئی بھی شہری زندہ نہیں بچا۔

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے اختتام ہفتہ پر جاری کردہ اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ حلب میں گذشتہ ماہ بیرل بموں کے حملوں میں بڑی تعداد میں شہری مارے گئے ہیں۔تنظیم نے کہا ہے کہ شامی فضائیہ یاتو مجرمانہ طور پر نااہل ہے کہ اس کو شہریوں کی ہلاکتوں کی کوئی پروا نہیں یا پھر وہ جان بوجھ کر شہری آبادی والے علاقوں کو نشانہ بنا رہی ہے۔

بیرل بم دھماکا خیز مواد کے سلنڈروں سے بھرے ہوتے ہیں یا ان میں تیل والے ڈرم ہوتے ہیں۔ہیلی کاپٹروں کے ذریعے ان سے مخصوص اہداف کو نشانہ بنایا جاتا ہے اور یہ بڑے پیمانے پر تباہی اور ہلاکتوں کی صلاحیت کے حامل ہوتے ہیں۔

شامی صدر بشارالاسد کی وفادار فوج باغیوں کے خلاف لڑائی میں وقتاً فوقتاً فضائی قوت کا استعمال کرتی رہتی ہے اور وہ حلب میں خاص طور پر باغیوں کے زیر قبضہ علاقوں میں گذشتہ کئی ہفتوں سے بمباری کررہی ہے لیکن وہ شہر کے مشرقی اور وسطی حصوں پر دوبارہ قبضہ کرنے میں ناکام رہی ہے۔ان علاقوں میں باغیوں نے 2012ء کے وسط میں قبضہ کر لیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں