عراق: کرسمس کے موقع پر بم حملے، 37 افراد ہلاک

الدورہ میں کرسمس کی تقریبات کے دوران کار بم حملہ، مارکیٹ میں بم دھماکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراق کے دارالحکومت بغداد میں جنگجوؤں نے کرسمس کے موقع پر مسیحی برادری پر دو بم حملے کیے ہیں جن کے نتیجے میں سینتیس افراد ہلاک اور کم سے کم پچاس زخمی ہوگئے ہیں۔

بغداد کے جنوب میں واقع نواحی علاقے الدورہ میں ایک گرجاگھر میں کرسمس کی تقریب کے دوران بارود سے بھری کار کو دھماکے سے اڑا دیا گیا ۔اس واقعے میں چھبیس افراد ہلاک اور اڑتیس زخمی ہوگئے ہیں۔

اس کاربم دھماکے سے تھوڑی دیر قبل ہی مسیحی آبادی والے علاقے آتھرین کے نزدیک ایک مارکیٹ میں بم دھماکا ہوا جس سے گیارہ افراد ہلاک اور اکیس زخمی ہوگئے۔عراقی پولیس نے ان دونوں بم حملوں میں ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے۔

فوری طور پر کسی گروپ نے ان بم حملوں کی ذمے داری قبول نہیں کی لیکن ماضی میں القاعدہ سے وابستہ جنگجوؤں پر مسیحی برادری پر بم حملوں کے الزامات عاید کیے جاتے رہے ہیں۔عراق میں مسیحی آبادی چار سے چھے لاکھ کے درمیان نفوس پر مشتمل ہے۔

کرسمس کے موقع پر ان ہلاکتوں کے بعد دسمبر میں اب تک عراق میں خودکش حملوں ،بم دھماکوں اور تشدد کے دوسرے واقعات میں مرنے والے عراقیوں کی تعداد 440 سے زیادہ ہوگئی ہے۔اقوام متحدہ کے فراہم کردہ اعدادوشمار کے مطابق اس سال اب تک عراق میں تشدد کے واقعات میں آٹھ ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں