.

اہل تشیع ووٹ کی خاطر مالکی اہل سنت کا قتل عام کرا رہے ہیں: طارق ہاشمی

"فوج شہریوں کو مارنے کے بجائے دہشت گردوں سے جنگ کرے"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے نائب صدر طارق الھاشمی نے وزیر اعظم نوری المالکی کی پالیسیوں کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ نوری المالکی اہل سنت مسل کے پیروکاروں کے قتل عام کےذریعے اہل تشیع کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

دوحہ سے "العربیہ" ٹیلی ویژن سے بات کرتے ہوئے عراق کے نائب صدرنے الزام عائد کیا کہ نوری المالکی ملک میں تشدد کو ہوا دے رہے ہیں۔ وہ انتخابی مہم میں اہل تشیع کے زیادہ سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے کے لیے سنی مسلک کے پیروکاروں کا خون بہا رہے ہیں۔

نائب صدر نے صوبہ الانبار سے سنی رکن پارلیمنٹ احمد العلوانی کی گرفتاری کی شدید مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ العلوانی کی گرفتاری کا کوئی جواز نہیں۔ وہ دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ حکومت نے انہیں گرفتار کراکے انارکی کو مزید ہوا دینے کی کوشش کی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں طارق الھاشمی کا کہنا تھا کہ نوری المالکی تیسری مرتبہ وزارت عظمیٰ کا منصب حاصل کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ انہیں اپنی شکست صاف دکھائی دے رہی ہے لیکن وہ فرقہ واریت کے فروغ کے ذریعے اپنا ووٹ بنک بڑھانا چاہتے ہیں۔ ان کے پاس قوم کو دینے کے لیے کچھ نہیں، اس لیے وہ اپن کامیابی کے لیے اوچھے ہتھکنڈوں پر اترآئے ہیں۔ انہیںصرف اقتدار اور کرسی سے غرض ہے۔ قومی مسائل کی کوئی پرواہ نہیں۔

"فوج دہشت گردی روکنے پر توجہ دے"

درایں اثناء عراق میں اہل تشیع کے قدامت پسند لیڈر مقتدیٰ الصدر نے اپنےایک بیان میں فوج پر زور دیا ہے کہ وہ شہریوں کو قتل کرنے کے بجائے دہشت گردوں کی بیخ کنی پرتوجہ دے۔ انہوں نے کہا کہ فوج کو ریاست میں امن وامان کی بحالی پرتوجہ دینا چاہیے۔ ملکی سیاست بالخصوص وزیراعظم نوری المالکی اور اپوزیشن کے درمیان جاری محاذ آرائی میں فوج کا کوئی کردار نہیں ہونا چاہیے۔

مقتدیٰ الصدر کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنےآیا ہے جب وزیراعظم نوری المالکی کے حکم پرسیکیورٹی فورسز نے الانبارصوبے میں اپوزیشن کے ایک دھرنے پر دھاوا بول کررکن پارلیمنٹ احمد العلوانی کو گرفتار اور ان کے بھائی سمیت چار افراد کو قتل کردیا ہے۔ الصدر نے اہل سنت اور اہل تشیع مسلک کے پیروکاروں پر زور دیا کہ وہ فروعی اختلافات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے دہشت گردی کے خلاف اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کریں۔