.

شام میں ہلاک ہونے والا حزب اللہ کا فیلڈ کمانڈر لبنان میں سپرد خاک

مقتول کمانڈ کی تشدد زدہ لاش آٹھ ماہ بعد حمص سے ملی: ذرائع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں صدر بشار الاسد کی فوج کے شانہ بشانہ لڑنا والا لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کا فیلڈ کمانڈر حسین صلاح حبیب کی میت مل گئی ہے جو آٹھ مہینوں سے لاپتا تھا۔ حسین صلاح کو شناخت کے بعد لبنان میں اس کے آبائی شہر بعلبک میں سپرد خاک کر دیا گیا ہے۔

کمانڈر حسین حبیب شام میں صدر بشارالاسد کی حمایت میں لڑ رہا تھا۔ گذشتہ جون میں وہ لاپتہ تھا۔ مقتول کمانڈر کےاہل خانہ کے ایک قریبی ذرائع نے بتایا کہ کمانڈر حسین کو ایک ماہ کے بعد مردہ حالت میں پایا گیا تھا۔ جسے مشرقی لبنان لائے جانے کے بعد سپرد خاک کردیا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ مقتول حسین کی تشدد زدہ لاش برآمد ہوئی تھی، اس کے جسم پر تیز دھار آلے اور چاقوؤں کے حملوں کے نشانات تھے۔

مقتول کمانڈر کے تیس سالہ قریبی عزیز نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر فرانسیسی خبر رساں ایجنسی" اے ایف پی" کو بتایا کہ حزب اللہ کمانڈر کی ہلاکت کی اطلاع اس کے اہل خانہ کو پہلے ہی مل چکی تھی لیکن اس کی میت کے بارے میں آٹھ ماہ تک کوئی معلومات نہیں مل رہی تھیں۔ ایک ہفتہ پیشتر القصیر میں تل مندو کے قریب اس کی لاش بھی مل گئی، جسے لبنان لائے جانے کے بعد اس کےآبائی شہر بعلبک میں دفن کیا گیا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں مقتول کمانڈر کے خاندانی ذرائع نے بتایا کہ حسین حبیب کی میت ناقابل شناخت تھی، لبنان منتقل کیے جانے کے بعد ڈی این اے کے ذریعے اس کی شناخت کی گئی ہے۔ شام میں انسانی حقوق آبزرویٹری کے مطابق صدر بشارالاسد کی حمایت میں لڑنے والے262 حزب اللہ جنگجو باغیوں کے حملوںمیں ہلاک ہوچکے ہیں۔